شکست خوردہ وزیراعظم پرویز اشرف پربیرون ملک جانے پر پابندی عاید

گورنرپنجاب احمد محمود اور پی پی پی کے وائس چیئرمین یوسف رضاگیلانی مستعفی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
4 منٹس read

پاکستان میں ہفتے کے روز منعقدہ عام انتخابات میں شکست خوردہ سابق وزیراعظم اوررینٹل پاور کیس کے ملزم راجا پرویزاشرف کے بیرون ملک جانے پر پابندی عاید کردی گئی ہے جبکہ ان کی جماعت پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) کے وائس چیئرمین یوسف رضا گیلانی انتخابات میں پارٹی کی بدترین شکست کے بعد اپنے عہدے سے مستعفی ہوگئے ہیں۔

اسلام آباد میں سرکاری ذرائع کے مطابق ملک بھرکے ہوائی اڈوں پر تعینات وفاقی تحقیقاتی ادارے (ایف آئی اے) اورامیگریشن حکام کو ہدایات جاری کی گئی ہیں کہ رینٹل پاورکیس کے کسی بھی ملزم کوبیرون ملک جانے نہ دیاجائے۔

راجا پرویز اشرف رینٹل پاور کیس کے مرکزی ملزم ہیں اور انھوں نے سابق حکومت میں پانی اور بجلی کے وفاقی وزیر کی حیثیت میں کرائے کے بجلی گھروں کے منصوبوں کی منظوری دی تھی۔ان میں مبینہ طور پر بائیس ارب روپے کی کرپشن کی گئی تھی۔اس کیس کی اب نیب سپریم کورٹ کے حکم پر دوبارہ تحقیقات کررہا ہے۔

سابق وزیراعظم عام انتخابات میں اپنی جماعت پی پی پی کے دوسرے امیدواروں کی طرح بدترین شکست سے دوچار ہوَئے ہیں اور وہ ضلع راول پنڈی کی تحصیل گوجرخان میں اپنے آبائی حلقے سے مسلم لیگ ن کے راجا جاوید اخلاص کے مقابلے میں ساٹھ ہزار سے زیادہ ووٹوں کے فرق سے ہارے ہیں۔

رینٹل پاورکیس میں پیپلز پارٹی کی حکومت کے دور میں سابق وزیرخزانہ شوکت ترین سے اسلام آباد میں قومی احتساب بیورو (نیب) کے ڈائریکٹرمیجر(ر)شہزاد کی سربراہی میں پانچ رکنی ٹیم نے سوموار کو تین گھنٹے تک تفتیش کی ہے۔ان پرالزام ہے کہ انھوں نے رینٹل پاورمنصوبوں کے لیے رقوم کی منظوری دی تھی۔ان کا موقف ہے کہ انھوں نے یہ اقدام قانون کے مطابق کیا تھا۔

ادھر پنجاب کے جنوبی ضلع ملتان میں پی پی پی کے سابق وزیراعظم سید یوسف رضا گیلانی نے عام انتخابات میں شکست کی ذمے داری قبول کرتے ہوئے پارٹی کے سینئر وائس چیئرمین کا عہدہ چھوڑنے کا اعلان کردیا ہے۔ ملتان پریس کلب میں نیوز کانفرنس میں سید یوسف رضا گیلانی نے کہا کہ عام انتخابات میں پیپلز پارٹی کے نتائج کی ذمے داری چیئرمین بلاول بھٹو زرداری پر عاید نہیں ہوتی اور نہ ہی اُنھیں اس سے منسلک کیا جائے ۔

انھوں نے ایک سوال کے جواب میں کہا کہ پارٹی کے عہدے سے استعفے کا تعلق ان کے بیٹے علی حیدر گیلانی کے اغوا سے بھی نہیں ہے۔تاہم ان کا کہنا تھا کہ 1997ء میں عام انتخابات کے نتائج اور 2013ء کے نتائج میں کوئی واضح فرق نہیں۔انتخابات میں دھاندلی کے حوالے سے پارٹی کی جانچ پڑتال کے بعد بات جائے گی۔واضح رہے کہ یوسف رضا گیلانی نے نااہل ہونے کی وجہ سے انتخابات میں حصہ نہیں لیا تھا اور اپنی جگہ اپنے چاروں بیٹے میدان میں اتارے تھے۔ان کے تین بیٹے ملتان سے قومی اسمبلی کے تین حلقوں سے امیدوار تھے اور چوتھا پنجاب اسمبلی کا امیدوار تھا لیکن ان چاروں کو بدترین شکست سے دوچار ہونا پڑا ہے۔

درایں اثناء سب سے بڑے صوبے پنجاب کے گورنر مخدوم احمد محمود نے بھی عام انتخابات کے دو روز بعد اپنے عہدے سے مستعفی ہونے اور سیاست سے کنارہ کشی کا اعلان کردیا ہے۔انھوں نے لاہور میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ''میں بطور گورنرپنجاب اپنی کارکردگی سے مطمئن ہوں''۔

انھوں نے کہا کہ ''آج کے دن کے بعد میں پارلیمانی سیاست سے بھی دور رہوں گا۔البتہ اپنی ذاتی حیثیت میں پاکستان کی خدمت کرتا رہوں گا''۔انھوں نے اپنا استعفیٰ صدر آصف علی زرداری کو بھجوا دیا ہے۔مخدوم احمد محمود کے دوبیٹوں نے آبائی ضلع رحیم یار خان سے سابق حکمراں پی پی پی کے ٹکٹ پر قومی اسمبلی کے دو حلقوں سے انتخاب لڑا ہے۔ان میں سے ایک جیت گیا ہے اور دوسرے کو شکست سے دوچار ہونا پڑا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں