.

عدالت عظمیٰ کا چاروں صوبوں کو بلدیاتی انتخابات کے انعقاد کا حکم

صوبوں کو 22 تک بلدیاتی انتخابات سے متعلق تفصیل جمع کرانے ہدایت

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

پاکستان کی عدالت عظمیٰ نے چاروں صوبوں کے ایڈووکیٹس جنرل کو بائیس جولائی تک بلدیاتی انتخابات کے انعقاد سے متعلق رپورٹ پیش کرنے کا حکم دیا ہے اور کہا ہے کہ چاروں صوبوں میں تیس ستمبر تک انتخابات کے انعقاد کے لیے نظام الاوقات سے آگاہ کیا جائے۔

عدالت عظمیٰ کے چیف جسٹس، جسٹس افتخار محمد چودھری نے صوبہ بلوچستان میں امن وامان کی صورت حال سے متعلق کیس کی سماعت کے دوران یہ حکم دیا ہے۔ انھوں نے کہا کہ صوبوں میں بلدیاتی انتخابات منعقد کرانا ایک آئینی تقاضا ہے۔

الیکشن کمیشن آف پاکستان کی جانب سے عدالت عظمیٰ کے تین رکنی بنچ کو بتایا گیا ہے کہ بلدیاتی انتخابات کے لیے نوٹی فیکیشن کے اجراء کے بعد نوے روز درکار ہوں گے۔

سماعت کے دوران سب سے بڑے صوبے پنجاب اور صوبہ خیبر پختونخوا کے ایڈووکیٹس جنرل نے عدالت کو بتایا ہے کہ وہ بلدیاتی انتخابات کے انعقاد کے لیے تیار ہیں جبکہ سندھ حکومت کے نمائندے نے کہا کہ انھیں اس ضمن میں پانچ ماہ درکار ہوں گے۔

جسٹس افتخار محمد چودھری نے اپنے ریمارکس میں کہا کہ اگر صوبائی حکومتیں مقامی حکومتوں کے انتخابات کرانے کو تیار نہیں تو پھر عدالت اس معاملے میں کوئی فیصلہ کرے گی۔انتخابات ستمبر میں ہونے چاہئیں۔

چیف جسٹس نے صوبہ بلوچستان میں بد امنی سے متعلق اس کیس کی مزید سماعت بائیس جولائی تک ملتوی کردی ہے۔