پاکستان: صدارتی انتخاب چھ اگست کے بجائے 30 جولائی کو ہو گا

شیڈول میں تبدیلی کا حکم سپریم کورٹ نے حکمران جماعت کی درخواست پر دیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

پاکستان کی عدالت عظمی کے سربراہ چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری نے الیکش کمیشن کو ہدایت کی ہے کہ ملک کے بارہویں صدر کا انتخاب چھ اگست کے بجائے 30 جولائی کو کیا جائے۔ چیف جسٹس نے یہ حکم ہدایت بدھ کے روز جاری کی ہے۔ بدھ کے روز ہی صدارتی انتخاب کے لیے کاغذات نامزدگی جمع کرانے کی تایخ ختم ہو گئی ہے۔

پاکستان جہاں ریاستی سربراہ کے اعلی ترین آئینی عہدے کے لیے الیکشن کمیشن آف پاکستان نے سولہ جولائی کو شیڈول جاری کرتے ہوئے اگلے ماہ چھ تاریخ کو نئے صدر کے لیے پارلیمنٹ اور چاروں صوبائی اسمبلیوں کے ارکان کے ووٹ ڈالنے کا نظام الاوقات بھی جاری کر دیا تھا۔ لیکن اتفاق سے تاریخ 27 رمضان المبارک کو آ رہی تھی جس پر حکمران جماعت نے عدالت سے رجوع کرتے ہوئے استدعا کی تھی کہ27 رمضان کو بہت سارے ارکان اسمبلی ادائیگی عمرہ کے لیے سعودی عرب میں ہوں گے اس لیے صدر کا انتخاب چھ اگست سے پہلے کرایا جائے۔

اس مقصد کے لیے حکمران مسلم لیگ کے سینئِر رہنما راجہ ظفرالحق نے سپریم کورٹ میں باضابطہ ایک درخواست دائر کی تھی، جس پر سپریم کورٹ نے الیکشن کمشن کا موقف جاننے کے بعد یہ حکم دیا ہے کہ ارکان اسمبلی کی اس حقیقی مجبوری کے پیش نظر صدارتی انتخاب 30 جولائی کو یقینی بنائی جائی۔

سپریم کورٹ کے اس فیصلے کے بعد ملک کی انتخابی شیڈول میں قدرے تبدیل ہو گئی ہے اور اب کاغذات نامزدگی واپس لینے کی تاریخ 27 جولائی کو حتمی صدارتی امیدواروں کی فہرست آویزاں کر دی جائے گی اور 30 جولائی کو ملک کا بارہواں صدر منتخب کر لیا جائے گا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں