.

برطانیہ: غیر قانونی تارکین سے سکیورٹی بانڈ لینے کی تجویز

تجویز پر ابھی فیصلہ نہیں ہوا، طلبہ، تاجر متاثر نہیں ہوں گے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

برطانیہ میں غیر قانونی طور پر مقیم تارکین وطن کو باضابطہ ویزا جاری کرنے کے لیے سکیورٹی بانڈز جمع کرنے کی تجویز برطانوی سیکرٹری داخلہ کی طرف سے غیر قانونی آمد روکنے کے لیے تقریبا دو ماہ قبل پیش کی گئی تھی۔ مختلف سطحوں پر زیر غور اس تجویز پر فیصلے کی صورت میں سب سے زیادہ پاکستان، بھارت اور بنگلہ دیش سے غیر قانونی طور پر پہنچے لوگ متاثر ہوں گے۔ برطانوی ذرائع کا کہنا کہ تا حال اس تجویز کے نفاذ کا فیصلہ نہیں کیا گیا، یہ محض ایک افواہ کے طور پر زیر بحث ہے۔

العربیہ کے ذرائع کے مطابق برطانوی محمکہ داخلہ کی جانب سے پیش کردہ اس تجویز پر من و عن عمل کی صورت میں ایک غیر قانونی تارک وطن کو سکیورٹی بانڈ کے طور پر تین ہزار پاونڈ جمع کرانے ہوں گے، تاہم فی الوقت یہ کہنا مشکل ہے کہ اس تجویز کو عملی جامہ پہنانے میں مزید کتنا وقت لگے گا ۔

برطانوی ذرائع کے مطابق برطانوی ہوم سیکرٹری کی اس تجویز سے عام کاروباری لوگ یا طلبہ متاثر نہیں ہوں گے بلکہ بہت محدود تعداد میں لوگ متاثر ہوں گے۔ اس تجویز کا عملی نفاذ کرنے کے لیے پارلیمنٹ کے ارکان اور حکومت سمیت ''مختلف سٹیک ہولڈرز'' سے بھی مشورہ کرنا ہو گا۔

ایک اہم برطانوی عہدیدار کا نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر کہنا تھا ''اس تجویز عمومی ویزا فیس سے کوئی تعلق نہیں ہے اگرچہ برطانوی ویزا فیس، ویزا دستاویزات کی تیاری اور اس سے متعلقہ پراسس پر اٹھنے والے اخراجات سے بھی کم ہے۔''