پاکستان: نوجوانوں کیلیے 20 ارب روپے کے منصوبوں کا اعلان

چھ مختلف منصوبے وزیر اعظم کے قوم سے دوسرے خطاب میں سامنے آئے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

پاکستان میں بڑھی ہوئی مہنگائی اور بیروزگاری کے چیلنج سے نمٹنے کے لیے نوجوانوں اور خواتین کو آسان شرائط پر قرضے دینے کے لیےچھ مختلف منصوبوں کا اعلان کیا گیا ہے۔ وزیراعظم نواز شریف نے یہ اعلان قوم سے اپنے دوسرے خطاب میں کیا ہے، تاکہ مہنگائی اور پھیلنے والی مایوسی پر قدرے قابو پایا جا سکے۔

مبصرین کے مطابق میاں نواز شریف کی حکومت کو ان اعلانات کے بعد آئندہ دنوں کم از کم نوجوانوں اور خواتین سے مزید حمایت ملنے کی راہ ہموار ہو جائے گی۔

ہفتے کی شام قوم سے خطاب میں بیس ارب روپے کی خطیر رقم سے نوجوانوں کے لیے چھ مختلف ترقیاتی اور امدادی منصوبوں میں نوجوانوں کو چھوٹے مگر کم سود پر اورغیر سودی قرضوں کے علاوہ ملک بھر کے طلبہ و طالبات کو صوبہ پنجاب کی طرح مفت لیپ ٹاپ دینے کا اعلان بھی کیا گیا ہے، تاہم ان تمام منصوبوں پر عمل درآمد کے لیے ابھی وقت درکار ہو گا۔

وزیراعظم کے اعلان کے مطابق وہ نوجوانوں کے مسائل حل کرنے اور انہیں معاشرے میں بہتر مقام دینے کا عزم رکھتے ہیں۔ وہ سمجھتے ہیں اپنے پاوں پر کھڑی ایک خوشحال نئی نسل ہی ملکی استحکام ، خود مختاری اور ترقی کے لیے اپنا کردار ادا کر سکتی ہے۔ اس مقصد کے لیے وہ چاروں صوبوں کے علاوہ آزاد کشمیر، گلگت بلتستان اور وفاق کے زیر انتظام سبھی علاقوں کے نوجوانوں کے لیے مختلف منصوبے سامنے لا رہے ہیں۔

وزیر اعظم کا کہنا تھا ''کابینہ نے اس منصوبے کے بنیادی خاکے کی منظوری دیدی ہے البتہ اس منصوبے کو عوامی تجاویز کے بعد حتمی شکل دی جائے گی ، تاکہ شفافیت اور میرٹ یقینی بنائی جا سکے۔''

قوم سے وزیراعظم کے خطاب میں نوجوانوں کے لیے مجموعی پیکج کی مالیت بیس ارب روپے بتائی گئی ہے، جن میں ساڑھے تین ارب روپے انتہائ غربت زدہ طبقوں کو سود سے پاک قرضوں کی صورت دیے جائیں گے۔ اس منصوبے سے ڈھائی لاکھ افراد فائدہ اٹھا سکیں گے۔

مذکورہ منصوبوں میں سے پچاس فیصد رقوم خواتین پر خرچ کی جائیں گی۔ خواتین کے لیے قرضوں کی حد پانچ لاکھ روپوں سے شروع ہو کر 20 لاکھ تک ہو گی۔

میاں نواز شریف نے گریجوایٹ طلبہ طالبات کے لیے گزشتہ ادوار سے جاری اس منصوبے کے لیے بھی رقم مختص کی ہے، جس کے تحت پچاس ہزار افراد دس ہزار ماہانہ کے حساب سے وظیفہ لیکر ملازمت کے لیے عملی تربیت پائیں گے۔ یہ سہولت کم تعلیم یافتہ نوجوانوں کے لیے پانچ ہزار روپے ماہانہ کے حساب سے ہو گی۔ ماہرین کے مطابق اس منصوبے سے سابقہ حکومتیں روزگار کا مطالبہ کرنے والے نوجوانوں کو کم از کم ایک سال کے لیے چپ کرانے سے کامیاب رہی تھیں۔

وزیر اعظم کی تقریر میں سب سے دلچسپ اعلان ہر سال چالیس ہزار طلبہ و طالبات کو مفت لیپ ٹاپ دینے کا ہے جو اب ماضی کی طرح پنجاب تک محدود نہیں ہو گا بلکہ پورے ملک تک پھیلا ہو گا۔

وزیر اعظم کے ناقدین ان اعلانات کو آئندہ دنوں بلدیاتی انتخابات سے بھی جوڑنے کی کوشش کریں گے، تاہم یہ طے ہے کہ روپے کا بہاو عوام کی طرف ہو گا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں