.

پاکستان: لاہور کی فوڈ سٹریٹ میں دھماکہ

زخمیوں میں ایک خاتون بھی شامل، تین زخمیوں کی حالت نازک

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

پاکستان کے آبادی کے لحاظ سے سب بڑے صوبے پنجاب کے دارالحکومت کے مصروف علاقے پرانی انار کلی میں قائم فوڈ سٹریٹ میں جمعرات کے روز ایک بم دھماکے سے کم از کم ایک شخص ہلاک اور چودہ افراد زخمی ہو گئے ہیں۔ یہ دھماکا پنجاب پولیس کے انتہائی ذمہ دار حکام کے غیر معمولی طور محفوظ بنائے گئے دفاتر سے تقریبا تین سو سے چار سو میٹر اور شیف سیکرٹری کے دفتر سے تقریبا ایک کلو میٹر کے فاصلے پر ہوا ہے۔

لاہور کی اسی فوڈ سٹریٹ میں تقریبا تین ماہ قبل بھی ایک دھماکا ہو چکا ہے۔ اس کے باوجود پولیس اور انتظامیہ کیلیے اس بارونق علاقے میں حفاظتی انتظامات کو فول پروف بنانا ممکن نہ ہوا۔ ایک محتاط اندازے کے مطابق اس فوڈ سٹریٹ میں روزانہ ہزاروں افراد کھانا کھانے آتے ہیں۔ اہم سرکاری محکموں اور تعلیمی اداروں میں گھری یہ فوڈ سٹریٹ مال روڈ سے متصل ہے۔

جمعرات کے روز گیارہ بجے کے بعد جب فوڈ سٹریٹ میں ہزاروں افراد کے لیے دوپہر کے کھانے کی تیاری ہو رہی تھی ایک بریانی ہاوس کے اندر اچانک دھماکا ہو گیا۔ دھماکے سے بریانی ہاوس کو غیر معمولی نقصان ہوا اور اس کے مالک سمیت کم از کم چودہ افراد زخمی ہو گئے۔ ابتدائی اطلاعات کے مطابق ایک شہری جاں بحق ہو چکا ہے اور تین کی حالت نازک بتائی جاتی ہے۔

لاہور کے ڈی سی او کے مطابق دھماکے کے نوعیت کا جائزہ لینے کیلیے بم ڈسپوزل ٹیم کے علاوہ فرینزک ماہرین کی ٹیمیں موقع پر پہنچ گئی ہیں۔ جو اس امر کا تعین کریں گی کہ دھماکہ کسی گیس سلنڈر کی وجہ سے ہوا یا بارود کے پھٹنے سے۔ دوسری جانب غیر مصدقہ اطلاعات یہ ہیں کہ تقریبا ایک کلو دھماکہ خیز مواد اس دھماکے میں استعمال ہوا ہے۔

زخمیوں کو فوری طور قریبی سرکاری ہسپتال پہنچا دیا گیا ہے۔ ایم ایس میو ہسپتال نے چودہ زخمیوں کے آنے کی تصدیق کی ہے۔ پولیس ذرائع کے مطابق مختلف پہلووں سے اس دھماکے کی تحقیقات شروع کی جارہی ہیں۔