پاکستان کے ساتھ مذاکرات وقت ضائع کرنے کے مترادف ہے: تحریک طالبان

سو فیصد یقین ہے کہ حکومت ڈرون حملوں کی حامی ہے: ترجمان شاہد اللہ شاہد

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

تحریک طالبان پاکستان کے افغانستان میں مقیم نئے امیر کے اعلان کے ساتھ ہی ٹی ٹی پی کے ترجمان شاہداللہ شاہد نے کہا ہے کہ نئے امیر فضل اللہ پاکستان کے ساتھ مذاکرات کو وقت ضائع کرنے کے مترادف سمجھتے ہیں۔

ترجمان کے مطابق'' ابھی اس بارے میں کوئی حتمی فیصلہ تو نہیں ہوا کیونکہ اب فیصلہ کرنا نئے امیر کا حق ہے لیکن جہاں تک امیر فضل اللہ کی رائے کا تعلق ہے وہ مذاکرات کے حق میں نہیں ہیں۔''

ایک عالمی خبر رساں ادارے سے بات چیت کرت ہوئے شاہد اللہ شاہد کا کہنا تھا '' پاکستان کے ساتھ مذاکرات کے ایشو پر کوئی گفتگو نہیں ہوئی ہے، ہم سمجھتے ہیں کہ پاکستانی حکومت ایک مقتدر حکومت نہیں بلکہ امریکی غلام حکومت ہے، اس لیے اس کے ساتھ مذاکرات کرنا اپنا وقت ضائع کرنے والی بات ہے۔''

ترجمان تحریک طالبان نے اپنے ایک اور بیان میں کہا ہے کہ '' تمام پاکستانی حکومتیں امریکا کے ساتھ مل کر دوہری گیم کرتی رہیں، ہمارے لوگوں کو قتل کرتی رہیں اور ہمیں دھوکہ دیتی رہیں۔ ہمیں سوفیصد یقین ہے کہ حکومت پاکستان امریکی ڈرونز کی حامی ہے۔''

تحریک طالبان کے نئے امیر کے انتخاب کے بعد اس خدشے کا اظہار کیا جا رہا ہے کہ پاکستان میں پر تشدد کارروائیاں پہلے سے بھی بڑھ جائیں گی۔

مقبول خبریں اہم خبریں