.

آفریدی کی جارحانہ بلے بازی، پاکستان ایشیا کپ کے فائنل میں!

بنگلہ دیشی ٹیم ایک روزہ میچ میں 326 رنز بنانے کے باوجود شکست سے دوچار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

پاکستان کرکٹ ٹیم شاہد آفریدی کی جارحانہ بلے بازی کی بدولت بنگلہ دیش کو تین وکٹ سے ہرا کر ایشیا کپ کرکٹ ٹورنا منٹ کے فائنل میں پہنچ گئی ہے۔

میرپور کے شیر بنگلہ نیشنل اسٹیڈیم میں منگل کو کھیلے گئے اس اہم میچ میں میزبان بنگلہ دیش کی ٹیم نے ٹاس جیت کر پہلے بلے بازی کی اور پچاس اوورز میں صرف تین وکٹ کے نقصان پر 326 رنز بنائے۔

بنگلہ دیش کے نوجوان اوپنر انعام الحق نے 132 گیندوں پر 100 رنز بنائے۔ انھوں نے دوسرے اوپنر بلے باز امراء القیس کے ساتھ مل کر پہلی وکٹ کی شراکت میں 150 رنز اسکور کیے۔ پاکستان کے خلاف ایک روزہ بین الاقوامی میچوں میں بنگلہ دیش کی جانب سے پہلی وکٹ کی شراکت میں یہ سب سے زیادہ اسکور ہے۔

بنگلہ دیشی بلے بازوں نے آج پاکستانی باؤلروں کی خوب دھنائی کی اور وہ آزادانہ گراؤنڈ کے چاروں طرف شاندار اسٹروکس کھیلتے رہے۔ محمد طلحہ اور عمر گل سب سے مہنگے باؤلر ثابت ہوئے۔ عمر گل کو دس اوورز میں 76 رنز پڑے اور محمد طلحہ نے 68 رنز دیے۔ شاہد آفریدی نے دس اوورز میں 64 رنز دیے۔

میزبان ٹیم کے بلے بازوں نے آخری دس اوورز میں 121 رنز بنائے۔ دوسرے نمایاں بلے بازوں میں مومن الحق 51 رنز بنا کر آؤٹ ہوئے اور کپتان مشفق الرحیم 51 رنز بنا کر ناٹ آؤٹ رہے۔ ان کے ساتھ شکیب الحسن نے جارحانہ بلے بازی کا مظاہرہ کرتے ہوئے سولہ گیندوں پر 44 رنز بنائے۔ ان کی اننگز میں چھے چوکے اور دو چھکے شامل تھے۔

بنگلہ دیش کے327 رنز کے ہدف کے جواب میں پاکستانی اوپنروں نے قابل اعتماد انداز میں اننگز کا آغاز کیا اور احمد شہزاد اور محمد حفیظ نے پہلی وکٹ کی شراکت میں 97 رنز بنائے۔ محمد حفیظ 52 رنز بنا کر آؤٹ ہوئے۔ ان کے بعد کپتان مصباح الحق کھیلنے کے لیے آئے لیکن وہ صرف چار رنز بنا کر ہی پویلین کو لوٹ گئے۔ صہیب مقصود نے دورنز بنائے۔ احمد شہزاد نے انتہائی ذمے دارانہ بیٹنگ کی اور 123 گیندوں پر 103 رنز بنا کر آؤٹ ہوئے۔

شاہد آفریدی نے صرف اٹھارہ گیندوں پر نصف سینچری اسکور کی اور یہ ان کی اتنی گیندوں پر ایک روزہ بین الاقوامی میچوں میں تیسری نصف سینچری تھی۔ انھوں نے پچیس گیندوں پر 59 رنز بنائے۔ انھوں نے اپنی اس مختصر مگر جارحانہ اننگز میں سات چھے اور دو چوکے لگائے۔ وہ رن آؤٹ ہوئے تھے لیکن تب پاکستانی ٹیم جیت کے قریب پہنچ چکی تھی۔ شاہد آفریدی کو ان کی جارحانہ بلے بازی پر میچ کا بہترین کھلاڑی قرار دیا گیا ہے۔

فواد عالم نے بوم بوم کے ساتھ مل کر جارحانہ بلے بازی کا مظاہرہ کیا اور ستر گیندوں پر 74 رنز بنائے۔ وہ بھی شاہد آفریدی کی طرح رن آٔؤٹ ہوئے۔ شاہد آفریدی کے بعدعمر اکمل کھیلنے کے لیے آئے اور انھوں نے نو گیندوں پر چودہ رنز بنائے اور ناٹ رہے۔ اس طرح پاکستانی ٹیم نے سات وکٹ کے نقصان پر 5۔49 اوورز میں مطلوبہ ہدف حاصل کر لیا۔

یہ پہلا موقع تھا کہ پاکستانی کرکٹ ٹیم نے تین سو سے زیادہ رنز کا ہدف حاصل کیا ہے اور بنگلہ دیشی ٹیم نے بھی ایک روزہ میچوں میں سب سے زیادہ رنز بنائے ہیں۔ اس سے پہلے اس نے نیوزی لینڈ کے خلاف آٹھ وکٹ کے نقصان پر 320 رنز بنائے تھے۔ پاکستان کی اس میچ میں جیت کے بعد بھارت ایشیا کپ سے آؤٹ ہو گیا ہے اور اب پاکستان کا سری لنکا سے فائنل میچ میں مقابلہ ہو گا۔