پاکستان بحرین یا سعودی عرب فوج نہیں بھیج رہا: وزیر اعظم

ان دونوں ممالک کی جانب سے فوج بھیجنے کے حوالے سے کوئی رابطہ نہیں کیا گیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

وزیر اعظم میاں نواز شریف نے ان قیاس آرائیوں کو مسترد کر دیا ہے کہ پاکستان بحرین یا سعودی عرب میں اپنی فوج بھیج رہا ہے۔

میاں نواز شریف نے یہ بات جمعرات کو صوبہ پنجاب کے شہر میانوالی میں ایم ایم عالم ائیربیس پر منعقدہ ایک تقریب کے دوران کہی ہے۔ان سے میڈیا کے نمائندوں نے پاکستان کی جانب سے بحرین یا سعودی عرب میں فوج بھیجنے کے حوالے سے سوال کیا تھا۔انھوں نے اس کے جواب میں کہا ہے کہ ''پاکستان نہ تو ان دونوں ممالک میں اپنی فوج بھیج رہا ہے اور نہ ان دونوں ممالک کی جانب سے اس سے اس ضمن میں کوِئی رابطہ کیا گیا ہے''۔

انھوں نے کہا کہ شاہ بحرین کا دورۂ پاکستان ملک کے مفاد میں ہے اور اس کو اسی تناظر میں دیکھا جانا چاہیے۔ انھوں نے کہا کہ اس وقت ملک کو مختلف چیلنجوں کا سامنا ہے اور ان سے نمٹنے کے لیے بروقت فیصلوں کی ضرورت ہے۔

بحرین کے شاہ حمد بن عیسیٰ بن سلمان الخلیفہ اکیس رکنی وفد کے ساتھ پاکستان کے تین روزہ دورے پر ہیں۔ان کے وفد میں دفاع اور داخلی سکیورٹی کے اعلیٰ عہدے دار بھی شامل ہیں۔

شاہ حمد نے بدھ کو اپنے وفد کے ہمراہ راول پنڈی میں جوائنٹ سروسز ہیڈکوارٹرز کا دورہ کیا تھا جہاں انھوں نے فوجی قیادت کے ساتھ دونوں ممالک کے درمیان برادرانہ تعلقات کے حوالے سے تبادلہ خیال کیا تھا اور طرفین نے دوطرفہ فوجی تعاون بڑھانے کے عزم کا اظہار کیا تھا۔پاکستان بحرین کے ساتھ دوطرفہ تجارتی تعلقات اور سرمایہ کاری کے فروغ کا خواہاں ہے جبکہ بحرین پاکستان کے ساتھ فوجی تعلقات بڑھانا چاہتا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں