.

نواز شریف کی زیرصدارت قومی سلامتی کمیٹی کا اجلاس

اجلاس میں سیکیورٹی اور علاقائی امور پر تبادلہ خیال کیا گیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

وزیراعظم پاکستان میاں محمد نواز شریف کی زیر صدارت قومی سلامتی سے متعلق کابینہ کمیٹی کا ہنگامی اجلاس تین گھنٹے سے زائد جاری رہنے کے بعد ختم ہوگیا ہے جس میں ملک کی موجودہ سیکیورٹی اور علاقائی صورتحال اور طالبان کی جانب سے جنگ بندی نہ کرنے کے اعلان پر تبادلۂ خیال کیا گیا۔

ذرائع کے مطابق اس اجلاس میں حکومت اور طالبان کے درمیان مذاکراتی عمل میں پیش رفت اور اس کے مستقبل پر بھی غور کیا گیا۔

کابینہ کے ذرائع یہ بھی بتاتے ہیں کہ اجلاس میں گزشتہ کچھ ہفتوں سے سول اور ملٹری قیادت کے درمیان کشیدگی پر بات چیت ہوئی۔

واضح رہے کہ ایک روز قبل ہی وزیر اعظم نواز شریف اور سابق صدارت آصف زرداری کے درمیان ہونے والے ایک اہم ملاقات میں دونوں رہنماؤں نے اس عزم کا اظہار کیا تھا کہ وہ ملک کو درپیش چیلنجز سے نمٹنے کی خاطر تمام قومی اداروں کو مضبوط بنانے کے لیے ان کا احترام کریں گے۔

اس اجلاس میں وفاقی وزیرِ داخلہ چوہدری نثار علی خان، وزیر دفاع خواجہ آصف، وزیر خزانہ اسحاق ڈار، وزیراعظم کے مشیر برائے قومی سلامتی سرتاج عزیز کے علاوہ چیف آف آرمی اسٹاف جنرل راحیل شریف، ڈائریکٹر جنرل آف انٹر سروسز انٹیلیجنس ( آئی ایس آئی، اور ڈائریکٹر جنرل آف انٹیلیجنس بیورو آفتاب سلطان نے بھی شرکت کی۔

خیال رہے کہ وزیراعظم کی جانب سے یہ اہم اجلاس ایک ایسے وقت طلب کیا گیا کہ جب گذشتہ روز تحریک طالبان پاکستان (ٹی ٹی پی) نے جنگ بندی میں توسیع نہ کرنے کے فیصلے کا اعلان کرتے ہوئے کہا تھا کہ حکومت عسکریت پسند تنظیم کی جانب سے چالیس دنوں سے زیادہ جنگ بندی کا مثبت جواب دینے میں ناکام رہی ہے۔

اعلیٰ سطح کے اس اہم اجلاس میں پڑوسی ملک افغانستان میں اس مہینے ہوئے صدارتی انتخابات کے بعد کی صورتحال پر بھی بریفنگ دی گئی۔