میاں نواز شریف اور اوباما کی مودی کو انتخابی کامیابی پر مبارک باد

پاکستانی وزیراعظم اور نامزد بھارتی وزیراعظم کے درمیان ٹیلی فون پر پہلا باضابطہ رابطہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

وزیراعظم پاکستان میاں نوازشریف نے پڑوسی ملک بھارت کے نامزد وزیراعظم نریندر مودی کو حالیہ عام انتخابات میں ان کی جماعت بھارتیہ جنتا پارٹی ( بی جے پی) کی شاندار کامیابی پر مبارک باد دی ہے۔

سرکاری ذرائع کے مطابق میاں نواز شریف نے جمعہ کو بھارت میں عام انتخابات کے جزوی نتائج کے اعلان کے بعد نریندر مودی کو ٹیلی فون کیا اور انھیں اور بھارتی عوام کو انتخابات کے کامیاب انعقاد پر مبارک پیش کی۔

پاکستانی وزیراعظم کا متوقع بھارتی وزیراعظم نریندر مودی سے یہ پہلا باضابطہ رابطہ ہے۔مشیر برائے امور خارجہ سرتاج عزیز کے مطابق میاں نواز شریف نے اس توقع کا اظہار کیا ہے کہ بی جے پی کی کامیابی سے خطے میں امن اور استحکام میں مدد ملے گی۔

درایں اثناء امریکی صدر براک اوباما نے بھی بھارت کے نامزد وزیراعظم نریندر مودی کو ٹیلی فون پر انتخابات میں کامیابی پر مبارک باد دی ہے اور انھیں امریکا کے دورے کی دعوت دی ہے۔

وائٹ ہاؤس کی جانب سے جاری کردہ بیان کے مطابق صدر اوباما نے ٹیلی فون پر گفتگو کے دوران اس خواہش کا اظہار کیا ہے کہ وہ امریکا،بھارت تزویراتی شراکت داری سے متعلق غیرمعمولی وعدوں کو پورا کرنے کے لیے مسٹر مودی سے مل کر کام کرنے کے خواہاں ہیں۔امریکی وزیرخارجہ جان کیری نے بھی ایک ٹویٹ میں بی جے پی کی قیادت کو اس کی عام انتخابات میں کامیابی پر مبارک باد دی ہے۔

ہندو قوم پرست جماعت بی جے پی کے زیرقیادت قومی جمہوری اتحاد (این ڈی اے) نے دم تحریر اعلان کردہ نتائج کے مطابق بھارتی پارلیمان کے ایوان زیریں لوک سبھا کی 337 نشستوں پر کامیابی حاصل کر لی ہے۔ان میں بی جے پی کی نشستوں کی تعداد 283 ہے۔اس طرح بی جے پی سخت گیر نریندر مودی کی قیادت میں واضح اکثریت سے حکومت بنانے میں کامیاب ہوجائے گی اور اس کو پہلی مرتبہ اقتدار کے لیے علاقائی جماعتوں کی بیسیاکھیوں کے سہارے کی ضرورت پیش نہیں آئے گی۔

اِس کی حریف اور موجودہ حکمران انڈین کانگریس کو عام انتخابات میں عبرت ناک شکست سے دوچار ہونا پڑا ہے اور اس کی قیادت نے اپنی شکست تسلیم کر لی ہے۔ کانگریس کے نامزد امیدوار صرف 43 نشستوں پر کامیاب ہو سکے ہیں۔اس کی اتجادی جماعتوں نے 15 نشستوں پر کامیابی حاصل کی ہے۔تجزیہ کاروں نے موروثی سیاست اور بدعنوانیوں کو کانگریس کی اس بدترین شکست کا سبب قراردیا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں