.

پاکستان: فورسز کی بمباری، 32 دہشت گرد ہلاک

ایک ماہ کے دوران یہ دوسری بڑی کارروائی ہے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

پاکستان کے وفاق کے زیر انتظام وزیرستان میں سکیورٹی فورسز نے بمباری کر کے کم از کم 32 مبینہ دہشت گردوں کو ہلاک کرنے کے علاوہ شدت پسندوں کے ٹھکانے بھی تباہ کر دیے ہیں۔ یہ فوجی کارروائی منگل اور بدھ کی درمیانی شب کی گئی ہے۔

ایک ماہ کے دوران پاکستان کی سکیورٹی فورسز کی طرف سے یہ دوسری بڑی کارروائی ہے۔ اس سے پہلے پچھلے ماہ اپریل کی 23 یا 24 تاریخ کو ایسی ہی ایک کارروائی کی گئی تھی۔ تاہم اس کارروائی میں ہلاک ہونے والوں کی تعداد کے بارے میں متضاد اطلاعات سامنے آئی تھیں۔ ماہ اپریل کی کارروائی میں بھی جنگی طیارے اور گن شپ ہیلی کاپٹر استعمال کیے گئے تھے۔

علاقے کے لوگوں کے مطابق فوجی طیاروں نے کارروائی کیلیے بدھ کے روز علی الصبح میر علی اور میرانشاہ کے علاقوں کو نشانہ بنایا ۔ ان میں وہ علاقے بطور خاص ہدف تھے جو دہشت گردوں کے ٹھکانوں کے طور پر جانے جاتے ہیں۔

دوسری جانب پاکستان کے سکیورٹی ذرائع سے معلوم ہوا ہے کہ مصدقہ اطلاعات کی بنیاد پر دہشت گردوں کے ٹھکانوں کو نشانہ بنایا گیا ہے ۔ اس کارروائی کے دوران دہشت گردوں کے بعض اہم کمانڈروں کے بھی مارے جانے کا امکان ہے جبکہ مجموعی طور 32 دہشت گرد ہلاک ہوئے ہیں۔

ان ذرائع کے مطابق یہ اطلاعات ملی تھیں کہ میران شاہ، مہمند ایجنسی، خیبر ایجنسی اور پشاور کے قرب و جوار میں حالیہ دنوں کارروائیوں کے بعد دہشت گردوں نے ان علاقوں میں پناہ لی ہے۔ تاہم ابھی تفصیلات کا انتظار ہے کہ اس کارروائی میں کس گروپ کو نشانہ بنایا گیا ہے اور کونسا کمانڈر ہلاک ہوا ہے۔