.

پشاور: مسافر طیارے پر دورانِ پرواز فائرنگ ،خاتون جاں بحق

عملے کے دو ارکان زخمی ،سکیورٹی فورسز نے علاقے کا محاصرہ کر لیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

پاکستان کے شمال مغربی شہر پشاور کے ہوائی اڈے پر نامعلوم مسلح افراد نے ایک مسافر طیارے پر دوران پرواز فائرنگ کی ہے جس کے نتیجے میں ایک خاتون جاں بحق اور دو افراد زخمی ہوگئے ہیں۔

اطلاعات کے مطابق پاکستان انٹرنیشنل ائیرلائنز (پی آئی اے) کا بوئنگ پی کے 756 سعودی دارالحکومت الریاض سے آیا تھا اور وہ پشاور کے باچا خان ہوائی اڈے پر اتر رہا تھا جب اس پر فائرنگ کی گئی ہے۔فائرنگ سے ایک خاتون اور عملے کے دو ارکان زخمی ہوگئے۔بعد میں خاتون اپنے زخموں کی تاب نہ لا کر دم توڑ گئی۔طیارے میں ایک سو چھیانوے افراد سوار تھے۔

پشاور پولیس کے حکام کا کہنا ہے کہ طیارے کو چھے گولیاں لگی ہیں اور اس کا کپتان بال بال بچا ہے۔ایک گولی طیارے کے انجن کو بھی لگی ہے۔جاں بحق ہونے والی خاتون کی بیٹی بھی اس کے ساتھ والی نشستیں پر بیٹھی ہوئی تھی اور اسی نے سب سے پہلے اپنی والدہ کی موت کی دہائی دی تھی۔

پی آئی اے کے ایک اہلکار کفایت اللہ خان نے بتایا ہے کہ فائرنگ کے بعد طیارے میں موجود مسافروں میں خوف وہراس پھیل گیا اور وہ فوری طور پر اس سے اترنا چاہتے تھے۔زخمیوں کی شناخت ماجد اور اعجاز چودھری کے نام سے کی گئی ہے اور انھیں کمبائنڈ ملٹری اسپتال پشاور منتقل کردیا گیا ہے۔

فوری طور پر پی آئی اے کی اس مسافر پرواز پر فائرنگ کرنے والوں کے بارے میں کچھ معلوم نہیں ہوسکا کہ وہ کون تھے اور انھوں نے کہاں سے فائرنگ کی ہے۔پولیس اور سکیورٹی فورسز نے ہوائی اڈے کے ارد گرد کے علاقے کا محاصرہ کر لیا ہے اور حملہ آوروں کی تلاش کی جارہی ہے۔

پشاور میں مسافر طیارے پر فائرنگ کا یہ واقعہ ملک کے سب سے بڑے شہر کراچی کے بین الاقوامی ہوائی اڈے پر جدید اسلحے سے مسلح دس حملہ آوروں کے دھاوے کے بعد پیش آیا ہے۔جون کے آغاز میں پیش آئے دہشت گردی کے اس واقعے میں بائیس مسافر جاں بحق اور تمام حملہ آور مارے گئَے تھے۔

کراچی کے ہوائی اڈے پر حملے کے بعد پاکستان آرمی وفاق کے زیرانتظام قبائلی علاقے شمالی وزیرستان میں طالبان جنگجوؤں کے خلاف ضرب عضب کے نام سے ایک بڑا آپریشن کررہی ہے جس کے دوران اب تک کم سے کم تین سو جنگجو مارے جا چکے ہیں اور علاقے سے چار سے پانچ لاکھ افراد اپنے گھر بار چھوڑ کر محفوظ مقامات کی جانب چلے گئے ہیں۔