.

شمالی وزیرستان:پاک فوج کی بمباری ، 18 جنگجو ہلاک

میرعلی میں جنگجوؤں کے ٹھکانوں پر طیاروں اور توپ خانے سے گولہ باری

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

پاکستان آرمی نے شمالی وزیرستان میں جاری آپریشن ضربِ عضب کے دوران طالبان جنگجوؤں کے مختلف ٹھکانوں پر طیاروں اور توپ خانے سے بمباری کی ہے جس کے نتیجے میں اٹھارہ جنگجو مارے گئے ہیں۔

سکیورٹی ذرائع کے مطابق پاک فوج نے جنگی طیاروں سے شمالی وزیرستان کے صدر مقام میران شاہ سے پچیس کلومیٹر مشرق میں واقع علاقے موسیٰ کی میں جنگجوؤں کے ٹھکانوں کو حملوں میں نشانہ بنایا ہے اور ہفتے کی رات اس سے تیس کلومیٹر مغرب میں واقع علاقے خارکمر میں توپ خانے سے گولہ باری کی تھی۔

ان حملوں میں تیرہ جنگجو مارے گئے تھے اور ان میں زیادہ تر ازبک تھے۔بمباری سے دہشت گردوں کے چھے ٹھکانے اور اسلحے کے ایک بہت بڑے ذخیرے کو تباہ کردیا گیا ہے۔پاکستان کے جنگی طیاروں نے شمالی وزیرستان کی تحصیل میرعلی میں بھی جنگجوؤں کی تنصیبات کو نشانہ بنایا ہے اور بمباری میں ان کے پانچ ٹھکانے تباہ ہوگئے ہیں۔

واضح رہے کہ پاکستان آرمی جنگجوؤں کے ٹھکانوں کو پہلے فضائی حملوں میں تباہ کرنے کے بعد زمینی کارروائیاں کررہی ہے۔پہلے اس نے میران شاہ کے بیشتر علاقے کو کلئیر کیا ہے اور وہ میران شاہ اور دتہ خیل پر اپنا کنٹرول مضبوط بنانے کی کوشش کررہی ہے۔اب تحصیل میرعلی میں کالعدم تحریک طالبان پاکستان (ٹی ٹی پی) کے ٹھکانوں پر بمباری کی جارہی ہے۔

سکیورٹی ذرائع کا کہنا ہے کہ دہشت گردوں کے ٹھکانوں کو تباہ کرنے کے بعد فوجی زمینی پیش قدمی کریں گے۔انھوں نے بتایا کہ راہ فرار اختیار کرنے والے جنگجو شمالی وزیرستان کے مختلف علاقوں میں بارودی سرنگیں بچھا رہے ہیں اور انھیں بھی صاف کیا جارہا ہے۔