اہلِ غزہ سے یک جہتی کے لیے کراچی میں ملین مارچ

پاکستانی مسلمان فلسطین پر اسرائیلی قبضے کو قبول نہیں کریں گے: سراج الحق

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
6 منٹس read

غزہ کی پٹی میں اسرائیلی جارحیت کا شکار نہتے ومظلوم فلسطینیوں سے اظہار یک جہتی کے لیے پاکستان کے سب سے بڑے شہر کراچی میں اتوار کو جماعت اسلامی کے زیر اہتمام ''ملین مارچ'' کے نام سے ایک بہت بڑی ریلی نکالی گئی ہے جس میں جماعت کے پریس نوٹ کے مطابق لاکھوں افراد نے شرکت کی ہے۔

کراچی کی شاہراہ فیصل پر منعقدہ اس غزہ ملین مارچ سے جماعت اسلامی کے امیر سراج الحق اور پاکستان کی دوسری بڑی سیاسی ومذہبی جماعتوں کے قائدین نے خطاب کیا ہے۔قطر میں مقیم حماس کے رہ نما خالد مشعل نے بھی مارچ کے شرکاء سے (ٹیلی فونک) خطاب کیا۔ سراج الحق نے اپنی تقریر میں کہا کہ ''پاکستان کے مسلمان بیت المقدس کی آزادی کے لیے اپنے جان ومال قربان کرنے کو تیار ہیں، وہ فلسطین پر صہیونیوں کا قبضہ کسی صورت قبول نہیں کریں گے''۔

انھوں نے کہا:''آج کا عظیم الشان غزہ ملین مارچ عالمی برادری اور بڑی طاقتوں کے لیے ایک پیغام ہے کہ عالم اسلام فلسطین اور مسلمانوں کے قبلہ اول بیت المقدس پر اسرائیلی قبضہ تسلیم نہیں کرے گا۔ہم بیت المقدس کی آزادی کے لیے اہل فلسطین کے ساتھ ہیں،اس مارچ نے عالم اسلام کا ایجنڈا واضح کر دیا ہے''۔

انھوں نے کہا کہ ''اسلام آباد میں جو مسئلہ چل رہا ہے لوگ اس کی طرف متوجہ ہیں لیکن آج ثابت ہو گیا ہے کہ زیادہ تر لوگ تو مکہ اورمدینہ منورہ کی طرف دیکھ رہے ہیں اور وہ مسجد اقصیٰ کی جانب دیکھ رہے ہیں۔وہ اس کی آزادی کے خواہاں ہیں''۔ وہ اسلام آباد میں اپنی اتحادی جماعت پاکستان تحریک انصاف کے آزادی مارچ اور پاکستان عوامی تحریک کے انقلاب مارچ کا حوالہ دے رہے تھے۔

انھوں نے بتایا کہ ''غزہ کے محصور عوام کے لیے جماعت اسلامی کراچی نے5کروڑ روپے کا عطیہ دیا ہے۔میں کہنا چاہتا ہوں پیسہ کیا چیز ہے، اگر موقع ملا تو ہم بیت المقدس کی آزادی کے لیے اپنی جانیں بھی قربان کرنے کو تیار ہوں گے۔ بیت المقدس پر یہودیوں کا قبضہ ہے جب تک ہماری جان ہے ہم اس کو کبھی قبول نہیں کریں گے''۔

انھوں نے کہا کہ آج اسرائیل کے پاس ہرطرح کی عسکری طاقت موجود ہے لیکن عالم اسلام کے پاس بھی بڑے معدنی اورعسکری وسائل موجود ہیں۔اس کے باجود فلسطین جل رہا ہے،غزہ کے نوجوان جل رہے ہیں، بستیاں برباد اور قبرستان آباد ہورہے ہیں۔مسلم حکمرانوں نے آج تک اسلامی تعاون تنظیم (او آئی سی) کا اجلا س نہیں بلایا ہے۔اس ضمن میں، میں نے سعودی عرب، ایران کے سربراہوں کو خط لکھا، وزیراعظم نواز شریف سے ملاقات کی ہے۔سراج الحق نے کہا کہ ''میں خالد مشعل کو یقین دلانا چاہتا ہوں کہ آج ہر پاکستانی اہلِ غزہ کے ساتھ ہے۔ حکمران امریکا سے ڈرنے کے بجائے غیرت کا مظاہرہ کریں''۔

خالد مشعل نے مارچ کے شرکاء سے اپنے ٹیلی فونک خطاب میں کہا کہ ''میں اپنے عزیز پاکستانی بھائیوں کو غزہ کے مسلمانوں سے اظہار یک جہتی پر خراج تحسین پیش کرتا ہوں۔آج اسرائیل نے غزہ میں ظلم کا بازارگرم کیا ہوا ہے مگرہم آخری وقت تک اسرائیل کا مقابلہ کرتے رہیں گے، اسرائیل ہمارے عزم کو کمزور نہیں کرسکتا ہے''۔

پاکستان پیپلز پارٹی کے رہ نما اور پارلیمان کے ایوان زیریں قومی اسمبلی میں قائد حزب اختلاف خورشید شاہ نے کہا کہ ''آج پاکستان کی تمام جماعتوں کی حمایت اور لاکھوں افراد کاسمندراس بات کاثبوت ہے کہ ہم ہر نظریہ اور ہرسوچ سے بالاتر ہو کر فلسطینیوں کے ساتھ ہیں،غزہ کے مظلوم مسلمان مائیں، بہنیں اوربیٹیاں پکار رہے ہیں کہ ہمیں صہیونیوں سے نجات دلائی جائے''۔

جماعت اسلامی کے سابق امیر سید منورحسن نے کہا کہ جماعت کی کوششوں سے پورے ملک میں عوام اہل غزہ سے اظہار یک جہتی اور ان کے لیے کچھ کرنے کے لیے گھروں سے نکلے ہیں، ہم غزہ کی حماس کو سلام پیش کرتے ہیں۔

انھوں نے مطالبہ کیا کہ غزہ کی پٹی کے محاصرے کوختم کیا جائے، اسرائیل نے مغربی کنارے میں فلسطینیوں کی سرزمین پر جتنی بستیاں بنائی ہیں، انھیں ختم کیا جائے اور انھیں مزید گھربنانے سے روکا جائے۔ان کا کہنا تھا کہ جن لوگوں نے مصر کی اخوان المسلمون کو دہشت گرد قرار دیا ہے وہ بزدل ہیں۔ مسلمانوں کو دہشت گرد کہنے والے استعمار کے ایجنٹ ہیں اور وہ مسلمانوں میں جذبہ جہاد ختم کرنا چاہتے ہیں۔

انھوں نے کہا کہ ''پاکستان کی حکومت اورفوج دونوں کو غزہ کے مسلمانوں کے لیے اپنا کرادار ادا کرنا چاہیے، صرف یوم فلسطین منانا کافی نہیں ہے، اہل غزہ کی مدد کے لیے بڑے پیمانے پر اسرائیل کے خلاف محاذ بنانے اورعوامی بیداری کی ضرورت ہے۔

حکمراں پاکستان مسلم لیگ نواز کے رہ نما سلیم ضیاء نے اپنی تقریر میں جماعت اسلامی کو دنیا بھر میں سب سے بڑی ریلی منعقد کرنے پر مبارک باد پیش کی اور کہا کہ امریکا اور اس کے ایجنٹوں نے دہرے معیاراختیارکیے ہوئے ہیں، کئی برس سے فلسطینیوں پر جاری مظالم پر امریکا اورمغربی ممالک نے نہ صرف مجرمانہ خاموشی اختیار کی ہوئی ہے بلکہ خود وہ خود ان پر حملوں میں ملوث ہیں اور اسرائیل کو اسلحہ فراہم کر رہے ہیں۔

جماعت اسلامی کے اس ملین مارچ سے جمعیت علماء پاکستان کے مرکزی نائب صدر ڈاکٹر صدیق راٹھور'جماعةُ الدعوة کے مرکزی رہنما عبدالرحمن مکی'جمعیت علماء اسلام کے مولانا عمر صادق، اقلیتی مسیحی رہنما یونس سوہن، مسلم لیگ کے نہال ہاشمی، شیعہ ایکشن کمیٹی کے مرزا یوسف حسین، تنظیم اسلامی کے صدر عامرخان ،عوام مسلم لیگ کے محفوظ یارخان، پی ڈی پی کے بشارت مرزا، مرکزی جمعیت اہلحدیث کے نائب صدر مولانا یوسف قصوری، پیپلزپارٹی کراچی کے رہنما قادر پٹیل اور کراچی پریس کلب کے صدر امتیاز خان فاران نے بھی خطاب کیا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں