.

ایرانی محافظوں کی فائرنگ،پاکستانی فوجی شہید

ایرانی اہلکاروں کی صوبہ بلوچستان کے سرحدی علاقے میں دراندازی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ایران کے سرحدی محافظوں نے پاکستان کے علاقے میں پیراملٹری فورس فرنٹیئر کور(ایف سی) کی ایک گاڑی پر فائرنگ کی ہے جس سے ایک اہلکار شہید اور تین زخمی ہوگئے ہیں۔

ایف سی کے ترجمان خان واسع نے صحافیوں کو بتایا یے کہ ایران کے سرحدی محافظ گذشتہ دو روز سے پاکستان کی علاقائی حدود کی خلاف ورزی کررہے ہیں۔انھوں نے جمعہ کی صبح ایف سی کی ایک گاڑی پر فائرنگ کی ہے جس سے اس کو نقصان پہنچا ہے۔ترجمان نے بتایا ہے کہ زخمی اہلکاروں کو علاج کے لیے کوئٹہ منتقل کردیا گیا ہے۔

ان کے بہ قول ایران کے سرحدی محافظ پاکستانی علاقے میں داخل ہوئے تھے اور انھوں نے صوبہ بلوچستان کے ضلع کیچ کی تحصیل منڈ میں ایف سی کی گاڑی پر حملہ کیا تھا۔

ایران کے بارڈر گارڈز سرحد کے ساتھ واقع پاکستان کے ایک اور قصبے نوکنڈی میں بھی درانداز ہوئے ہیں۔انھوں نے اس کے نواح میں واقع ایک گاؤں کے مکینوں کو چھے گھنٹے تک یرغمال بنائے رکھا ہے اور انھیں جسمانی تشدد کا بھی نشانہ بنایا ہے۔ایرانی محافظوں کی دراندازیوں کے بعد پاکستان کے سرحدی دیہات میں خوف وہراس پایا جارہا ہے۔

بلوچستان میں فرنٹئیر کور کے انسپکٹر جنرل میجر جنرل اعجاز شاہد نے ایران کے سرحدی محافظوں کی پاکستانی علاقے میں دراندازی کی شدید مذمت کی ہے اور کہا ہے کہ مستقبل میں ایرانیوں کی جانب سے خلاف ورزی کی صورت میں سرحد کا دفاع کیا جائے گا۔

اس واقعے کے بعد نو سو کلومیٹر طویل پاک ایران سرحد پر پاکستانی فورسز نے سکیورٹی مزید سخت کردی ہے اور ایف سی کی مزید نفری طلب کرلی گئی ہے تاکہ مستقبل میں کسی ناخوشگوار واقعہ سے بچا جاسکے۔ ایف سی اور صوبہ بلوچستان کے محکمہ داخلہ اور قبائلی امور نے اسلام آباد میں دفتر خارجہ کو ایران کے سکیورٹی اہلکاروں کی جانب سے حالیہ سرحدی خلاف ورزیوں کے بارے میں مطلع کردیا ہے۔