.

کراچی : کارساز حملے میں ملوّث مشتبہ دہشت گرد گرفتار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

پاکستان کے سب سے بڑے شہر کراچی کے سینیر سپرنٹینڈنٹ پولیس (ایس ایس پی) عثمان باجوہ نے دعویٰ کیا ہے کہ انھوں نے کارساز میں 2007ء میں سابق وزیراعظم مقتول بے نظیر بھٹو کے استقبالی جلوس پر خود کش بم حملوں میں ملوث دو مشتبہ دہشت گرد گرفتار کر لیا ہے۔

انھوں نے جمعہ کو کراچی میں ایک نیوز کانفرنس میں بتایا ہے کہ ان دونوں دہشت گردوں کے علاوہ ایک ٹارگٹ کلر کو بھی شہر میں اہدافی کارروائیوں کے دوران گرفتار کیا گیا ہے اور ان کے قبضے سے اسلحہ بھی برآمد ہوا ہے۔ان کا تعلق کالعدم تحریک طالبان پاکستان (ٹی ٹی پی) سے بتایا گیا ہے۔

انھوں نے بتایا ہے کہ گرفتار ملزموں نے 18 اکتوبر 2007ء کو بے نظیر بھٹو کی ریلی پر حملے اور پاکستان پیپلز پارٹی کے شریک چئیرمین آصف علی زرداری کے ایک دیرینہ معاون بلال شیخ پر خودکش بم حملے سے متعلق اہم انکشافات کیے ہیں۔

انھوں نے ٹی ٹی پی سے وابستہ ملزموں کی شناخت جمشیدخان المعروف خٹکی اور محمد عابد عرف عبداللہ کے نام سے کی ہے اور ٹارگٹ کلر کا نام جنید زیدی بتایا ہے۔ پولیس نے ان کے قبضے سے دو 30 بور پستول اور دو دستی بم برآمد کیے ہیں۔عثمان باجوہ کا کہنا تھا کہ ان ملزموں کو نیشنل ہائی وے پر واقع منزل پٹرول پمپ کے نزدیک سے گرفتار کیا گیا ہے۔یہ علاقہ شاہ لطیف پولیس اسٹیشن کی حدود میں واقع ہے۔

ایس ایس پی کا کہنا تھا کہ گرفتار ملزمان بھتا خوری ،ٹارگٹ کلنگ اور بم دھماکوں کے واقعات میں ملوث تھے۔انھوں نے مزید بتایا ہے کہ ایک اور چھاپہ مار کارروائی میں ایک ٹارگٹ کلر کو گرفتار کیا گیا ہے اور اس نے بیس افراد کو قتل کرنے کا اعتراف کیا ہے۔

پولیس نے سہراب گوٹھ کے علاقے میں کالعدم تحریک طالبان سے تعلق رکھنے والے تین مشتبہ دہشت گردوں کو ہلاک کرنے کا بھی دعویٰ کیا ہے۔ایس ایس پی ملیر راؤ انوار نے صحافیوں کو بتایا کہ ایک خودکش بمبار اور ٹی ٹی پی کا کمانڈر پولیس کے ساتھ فائرنگ کے تبادلے میں مارا گیا ہے۔اس کمانڈر کی شناخت سلطان کے نام سے ہوئی ہے۔پولیس نے چھاپہ مار کارروائی کے دوران بھاری اسلحہ ،ڈیٹونیٹرز اور ایک خودکش جیکٹ برآمد کی ہے۔

درایں اثناء کراچی میں پانچ مختلف حملوں میں دو پولیس اہلکار ہلاک اور چھے زخمی ہوگئے ہیں۔ حملہ آوروں نے ان واقعات میں پولیس اور سکیورٹی فورسز کے اہلکاروں کو نشانہ بنایا ہے۔نیپا کے علاقے میں ایک امام بارگاہ کے نزدیک سکیورٹی پر مامور پولیس کی گشتی پارٹی پر دستی بم سے حملہ کیا گیا جس سے دو پولیس کانسٹیبل زخمی ہوگئے ہیں۔ناگن چورنگی میں نامعلوم مسلح افراد نے پولیس کی ایک گاڑی پر فائرنگ کردی جس کے بعد وہ فرار ہونے میں کامیاب ہو گئے۔ سہراب گوٹھ میں ایک اور حملے میں دو پولیس اہلکار زخمی ہوئے ہیں۔