.

پاکستانی فوج کی کارروائیاں، 55 دہشت گرد ہلاک

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

پاکستانی سکیورٹی فورسز کی ملک کے شمال مغربی قبائلی علاقوں میں جاری فضائی اور زمینی کارروائیوں میں ہفتے کے روز مجموعی طور پر مزید پچپن عسکریت پسند مارے گئے ہیں۔

شمال مغربی پاکستان میں پشاور سے ملنے والی رپورٹوں میں بتایا گیا ہے کہ ملکی فوج نے اس سال موسم گرما میں قبائلی علاقوں میں مقامی طالبان عسکریت پسندوں اور دہشت گردوں کے خلاف جو آپریشن شروع کیا تھا، اس میں سولہ دسمبر کو پشاور کے آرمی پبلک اسکول پر طالبان کے حملے میں ایک سو پچاس افراد کی ہلاکت کے بعد سے واضح تیزی آ چکی ہے۔

سکیورٹی فورسز کی کارروائیوں میں تیزی کا نتیجہ يہ ہے کہ اب شمالی وزیرستان میں جاری آپریشن ضرب عضب اور خیبر ایجنسی میں جاری آپریشن خیبر ون میں عسکریت پسندوں کو مسلسل بڑھتے ہوئے جانی نقصان کا سامنا ہے۔ نیوز ایجنسی اے ایف پی کا کہنا ہے کہ پاکستانی فوج کے مسلح دستوں نے افغان سرحد کے قریب کل جمعہ کو رات گئے اور آج ہفتے کو بھی عسکریت پسندوں کے کئی مبینہ ٹھکانوں پر حملے کیے۔

پاکستان آرمی کے بروز ہفتہ جاری کردہ ایک بیان کے مطابق ان حملوں میں سے زیادہ تر اورکزئی ایجنسی اور خیبر ایجنسی کے قبائلی علاقوں کی داخلی حد بندی کے قریب کیے گئے۔ اس علاقے میں عسکریت پسند اپنے ایک اجلاس کے لیے جمع ہوئے تھے۔ ان کارروائیوں کے دوران پاکستانی دستوں کی عسکریت پسندوں کے ساتھ شدید نوعیت کی زمینی جھڑپیں بھی ہوئیں، جن میں کم از کم سولہ دہشت گرد ہلاک اور بیس زخمی ہو گئے۔

فوج کے شعبہ تعلقات عامہ 'آئی ایس پی آر' کے بیان کے مطابق ان جھڑپوں میں عسکریت پسند اپنے ہلاک ہونے والے ساتھیوں میں سے نو کی لاشوں کو وہیں چھوڑ کر فرار ہو گئے۔ بیان میں کہا گیا ہے کہ ان جھڑپوں میں چار فوجی بھی زخمی ہوئے جبکہ دو ایسے شدت پسندوں کو بھی گرفتار کر لیا گیا، جو شدید زخمی تھے اور جنہیں ان کے ساتھی فرار ہوتے ہوئے اپنے پیچھے چھوڑ گئے تھے۔

اسی دوران پاکستان فوج کے ترجمان میجر جنرل عاصم باجوہ نے آج بتایا کہ شمال مغربی پاکستان ہی میں جمعے کو رات گئے کیے گئے فضائی حملوں میں کم از کم انتالیس عسکریت پسندوں کو ہلاک کر دیا گیا، جن میں ان کے دو کمانڈر بھی شامل تھے۔ باجوہ کے بقول ان فضائی حملوں میں عسکریت پسندوں کا اسلحے اور گولہ بارود کا ایک ڈپو بھی تباہ کر دیا گیا۔

اسی دوران صوبے خیبر پختونخوا میں پولیس نے بتایا ہے کہ ایک اور واقعے میں پولیس نے کالعدم تحریک طالبان پاکستان کے ایک اہم کمانڈر کو گرفتار کر لیا ہے۔ یہ عسکریت پسند رہنما پولیس اہلکاروں پر کئی حملوں کے سلسلے ميں مطلوب ہونے کے علاوہ ایک مقامی صحافی کے قتل میں بھی ملوث تھا۔

پاکستانی فوج کے مطابق اس سال موسم گرما سے قبائلی علاقوں میں جاری آپریشن کے دوران وہ اب تک سترہ سو سے زائد عسکریت پسندوں کو ہلاک کر چکی ہے جبکہ اس کے 126 فوجی بھی مارے جا چکے ہیں۔