شکار پور:امام بارگاہ میں بم دھماکا،55 افراد ہلاک

داعش سے وابستہ جنداللہ نے حملے کی ذمے داری قبول کر لی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
4 منٹس read

پاکستان کے صوبہ سندھ کے ضلع شکار پور میں اہلِ تشیع کی ایک امام بارگاہ میں تباہ کن بم دھماکا ہوا ہے جس کے نتیجے میں مرنے والوں کی تعداد پچپن ہوگئی ہے اور ساٹھ سے زیادہ افراد زخمی ہوئے ہیں جبکہ داعش سے وابستہ جنگجو گروپ جنداللہ نے اس حملے کی ذمے داری قبول کرنے کا دعویٰ کیا ہے۔

اطلاعات کے مطابق بم دھماکا شکارپور کے علاقے لکھی در میں جمعہ کی نماز کے فوری بعد ہوا ہے۔دھماکا اتنا زوردار تھا کہ اس کے نتیجے میں امام بارگاہ کی عمارت کی چھت زمین بوس ہوگئی جس سے بہت سے افراد ملبے تلے دب گئے تھے۔عینی شاہدین کے مطابق دھماکے کے وقت مسجد اور امام بارگاہ میں قریباً چار سو افراد موجود تھے۔

سول اسپتال شکارپور کے میڈیکل سپرنٹنڈینٹ شوکت میمن نے بم دھماکے میں انچاس افراد کی ہلاکت اور پچپن کے زخمی ہونے کی تصدیق کی ہے۔انھوں نے بتایا ہے کہ بعض زخمیوں کی حالت تشویش ناک ہے۔مہلوکین اور زخمیوں میں بچے بھی شامل ہیں۔اسپتال ایک فہرست جاری کی ہے جس کے مطابق چھیالیس مہلوکین کی شناخت ہوگئی ہے اور باقی لاشوں کی شناخت کی جارہی ہے۔متعدد زخمیوں کو سکھر اور لاڑکانہ کے اسپتالوں میں منتقل کردیا گیا ہے۔

کالعدم تحریک طالبان پاکستان (ٹی ٹی پی) سے گذشتہ سال الگ ہونے والے گروپ جنداللہ نے اس بم دھماکے کی ذمے داری قبول کی ہے۔ جنداللہ کے ترجمان فہد مروت نے ایک بیان میں کہا ہے کہ ''ہمارا ہدف اہلِ تشیع کی مسجد تھی کیونکہ یہ لوگ ہمارے دشمن ہیں''۔اس گروپ نے عراق اور شام میں برسرپیکار سخت گیر جنگجو گروپ داعش کے ساتھ خود کو وابستہ کررکھا ہے۔

صوبہ سندھ کے وزیراطلاعات شرجیل انعام میمن نے ایک نجی ٹی وی سے گفتگو کرتے ہوئے کہا ہے کہ شکارپور اور اس کے نواحی قصبوں اور شہروں کے تمام اسپتالوں میں ایمرجنسی نافذ کردی گئی ہے۔وزیراعلیٰ سندھ سید قائم علی شاہ نے شکارپور میں دہشت گردی کے اس واقعے میں شہریوں کی ہلاکتوں پر ہفتے کے روز ایک دن کا سوگ منانے کا اعلان کیا ہے۔

اہل تشیع کی جماعت مجلس وحدت المسلمین کے سربراہ علامہ امین شہیدی نے اس بم دھماکے میں ہلاکتوں پر تین دن کے سوگ کا اعلان کیا ہے اوراس واقعے کو حکومت کی ناکامی قراردیا ہے۔ اس جماعت نے صوبہ سندھ میں دہشت گردی کے اس حملے کے خلاف ایک دن کی پُرامن ہڑتال کی اپیل کی ہے۔متحدہ قومی موومنٹ نے بھی اس کی حمایت کی ہے۔

وزیراعظم میاں نواز شریف ،صدر مملکت ممنون حسین ،تحریک انصاف کے چئیرمین عمران خان اور متحدہ قومی موومنٹ کے سربراہ الطاف حسین نے شکار پور میں بم دھماکے کی مذمت کی ہے اور اس میں انسانی جانوں کے ضیاع پر گہرے دکھ اور افسوس کا اظہار کیا ہے۔

شکارپور میں یہ تباہ کن بم دھماکا ایسے وقت میں ہوا ہے جب پاکستان کی مرکزی حکومت ملک سے دہشت گردی کی لعنت کو جڑ سے اکھاڑ پھینکنے کے لیے قومی ایکشن پلان پر عمل پیرا ہے۔ملک کی سول اور فوجی قیادت نے شمال مغربی شہر پشاور میں 16 دسمبر کو طالبان جنگجوؤں کے آرمی پبلک اسکول پر سفاکانہ حملے کے بعد یہ ایکشن پلان ترتیب دیا تھا۔

پاکستان کی مسلح افواج شمال مغربی علاقے شمالی وزیرستان طالبان دہشت گردوں کی بیخ کنی کے لیے گذشتہ سال جون سے آپریشن ضرب عضب کررہی ہیں اور ملک کے دوسرے شہروں اور علاقوں میں بھی انتہا پسند دہشت گردوں کے خلاف کارروائیاں جاری ہیں لیکن اس کے باوجود وہ عام شہریوں اور سکیورٹی فورسز کے اہلکاروں پر وقفے وقفے سے حملے کرنے میں کامیاب ہو جاتے ہیں۔البتہ اب مجموعی طور پر دہشت گردی کے واقعات میں کمی واقع ہوئی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں