.

پاکستان آسٹریلیا سے ہار گیا،عالمی کپ سے باہر

پاکستانی بلے باز بڑا اسکور کرنے میں ناکام،فیلڈنگ بھی خراب رہی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

آسٹریلیا کی کرکٹ ٹیم پاکستان کو چھے وکٹ سے ہراکر آئی سی سی عالمی کپ کرکٹ ٹورنا منٹ کے سیمی فائنل میں میں پہنچ گئی ہے اور پاکستان کی ٹیم کوارٹرز فائنل میں شکست کے بعد ٹورنا منٹ سے باہر ہوگئی ہے۔

پاکستان کرکٹ ٹیم کے کپتان مصباح الحق نے ایڈی لیڈ اوول میں جمعہ کو کھیلے گئے دن اور رات کے اس میچ میں ٹاس جیت کر پہلے بازی کا فیصلہ کیا لیکن ان کی پوری ٹیم پچاسویں اوور میں 213 رنز بنا کر آؤٹ ہوگئی۔جواب میں آسٹریلیا کی ٹیم نے یہ ہدف چونتسیویں اوور میں چار وکٹ کے نقصان پر پورا کر لیا ہے۔

آسٹریلوی باؤلروں نے آج نپی تلی باؤلنگ کا مظاہرہ کیا اور پاکستانی بلے بازوں کو جم کر کھیلنے کا موقع نہیں دیا۔ پاکستان کے دونوں ابتدائی کھلاڑی نمایاں سکور کرنے میں ناکام رہے ہیں۔آئیرلینڈ کے خلاف سینچری بنانے والے سرفراز احمد صرف دس رنز بنا کر آؤٹ ہوگئے۔ان کے بعد پانچویں اوور میں دوسرے اوپنر احمد شہزاد بھی صرف پانچ رنز بنا کر پویلین کو لوٹ گئے۔

دونوں اوپنروں کے آؤٹ ہونے کے بعد پاکستانی ٹیم دباؤ کا شکار ہوگئی لیکن اس موقع پر کپتان مصباح الحق اور حارث سہیل نے ذمے دارانہ انداز میں کھیلنا شروع کیا اور وہ قریباً پانچ رنز کی اوسط سے اسکور میں اضافہ کرتے رہے مگر مصباح الحق آج کوئی بڑا اسکور کرنے میں ناکام رہے ہیں اور چوبیسیویں اوور میں 34 رنز بنا کر آؤٹ ہوگئے۔انھیں میکسویل کی گیند پرآرون فینچ نے کیچ آؤٹ کیا۔ان کے تھوڑی دیر بعد حارث سہیل بھی 41 رنز بنا کر ہوگئے۔انھیں بھی میکسویل نے آؤٹ کیا۔

مجموعی اسکور 97 پر مصباح الحق کے پویلین لوٹنے کے بعد باقی پاکستانی بلے باز بھی وقفے وقفے سے آؤٹ ہوتے رہے اور کوئی بھی بلے باز اس اہم میچ میں بڑا اسکور کرنے میں ناکام رہا ہے۔عمر اکمل 20 ، جارحانہ انداز میں کھیلنے والے شاہد آفریدی 23 اور صہیب مقصود 29 رنز بنا کر آؤٹ ہوئے۔وہاب ریاض 16 اور احسان عادل 15 رنز بنا سکے۔سہیل خان صرف چار رنز بنا کر آؤٹ ہوئے اور راحت علی چھے رنز کے ساتھ ناٹ آؤٹ رہے۔

آسٹریلوی باؤلر جے آر ہیزل وڈ نے پاکستان کے چار کھلاڑیوں کو آؤٹ کیا۔انھیں میچ کا بہترین کھلاڑی قرار دیا گیا ہے۔پاکستانی بلے بازی کے جواب میں آسٹریلیا کا آغاز بھی اچھا نہیں تھا اور اس کے اوپنر تیسرے اوور میں صرف دو رنز کر آؤٹ ہوگئے۔انھیں سہیل خان نے ایل بی ڈبلیو کیا۔ان کے بعد دوسرے اوپنر وارنر 24 اور کپتان مائیکل کلارک صرف آٹھ رنز بنا کر آؤٹ ہوگئے۔ان دونوں کھلاڑیوں کو وہاب ریاض نے آؤٹ کیا۔

اس مرحلے پر آسٹریلوی بلے باز دباؤ میں آگئے تھے لیکن اسٹوین اسمتھ اور شین واٹسن نے ذمے دارانہ بلے بازی کا مظاہرہ کیا اور وہ آسٹریلوی اسکور میں مسلسل اضافہ کرتے رہے۔اسمتھ 65 رنز بنا کر احسان عادل کی گیند پر ایل بی ڈبلیو آؤٹ ہوئے۔واٹسن 64 اور میکسویل 44 رنز بنا کر ناٹ آؤٹ رہے اورانھوں نے چونتیسویں اوور میں 216 رنز بنا کر اپنی ٹیم کو فتح سے ہم کنار کردیا۔

اس اہم میچ میں پاکستانی ٹیم نے بلے بازی کے علاوہ فیلڈنگ میں بھی خراب کاردگی کا مظاہرہ کیا ہے اور کھلاڑی کئی یقینی کیچ پکڑنے میں ناکام رہے حالانکہ پاکستانی باؤلروں نے ایک وقت میں آسٹریلوی بلے بازوں کو دباؤ میں لانے میں کامیاب ہوگئے تھے اور مبصرین نے بھی ان کی کارکردگی کی تعریف کی ہے۔

میچ کے بعد کپتان مصباح الحق نے کہا کہ ان کے ذہن میں 270 اور 280 رنز بنانے کا ہدف تھا لیکن ہمارے بلے باز غلط انداز میں شاٹس کھیلتے ہوئے باری باری آؤٹ ہوتے رہے اور ہم زیادہ اسکور کرنے میں ناکام رہے ہیں۔انھوں نے باؤلروں کی کارکردگی کی تعریف کی ہے۔اب سیمی فائنل میں آسٹریلیا کا مقابلہ بھارت سے ہوگا۔چوتھا کوارٹر فائنل ہفتے کے روز نیوزی لینڈ اور ویسٹ انڈیز کے درمیان کھیلا جائے گا اور ان دونوں میں فاتح ٹیم کا سیمی فائنل میں جنوبی افریقہ کے ساتھ مقابلہ ہوگا۔