.

کراچی: بوہرہ فرقے کی مسجد کے باہر بم دھماکا، دو ہلاک

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

پاکستان کے سب سے بڑے شہر کراچی میں بوہرہ فرقے کی مسجد کے باہر بم دھماکے کےنتیجے میں دو افراد ہلاک اور متعدد زخمی ہوگئے ہیں۔

اطلاعات کے مطابق کراچی کے علاقے آرام باغ میں پاکستان چوک کے نزدیک واقع بوہرہ کمیونٹی کی مسجد صالح کے باہر نماز جمعہ کے وقت بم دھماکا ہوا ہے۔ اس وقت نمازی مسجد میں جمعہ کی نماز ادا کرنے کے بعد باہر نکل رہے تھے۔

عینی شاہدین نے بتایا ہے کہ نماز جمعہ کے وقت زور دار دھماکا ہوا تھا۔اس سے نزدیک واقع دکانوں اور عمارتوں کے شیشے ٹوٹ گئے ہیں۔ پاکستان چوک میں ہر وقت ٹریفک کا رش ہوتا ہے۔امدادی کارکنان کا کہنا ہے کہ انھیں ٹریفک اور تنگ گلیوں کی وجہ سے زخمیوں کو اسپتال منتقل کرنے میں دشواری پیش آئی ہے۔

ڈپٹی انسپکٹر جنرل پولیس عبدالخالق شیخ نے بم دھماکے میں ایک شخص کی ہلاکت کی تصدیق کی ہے اور بتایا ہے کہ واقعے میں چار افراد زخمی ہوئے ہیں۔ان میں دو کی حالت تشویش ناک ہے۔ان میں سے ایک اسپتال میں زخموں کی تاب نہ لا کر دم توڑ گیا ہے۔انھوں نے بتایا کہ ایک ٹائم بم موٹر سائیکل کے ساتھ نصب کیا گیا تھا اور اسی کے پھٹنے سے زور دار دھماکا ہوا ہے۔

انھوں نے مسجد کے تحفظ پر مامور پولیس اہلکاروں کی کارکردگی کی تعریف کی ہے اور کہا ہے کہ بہتر سکیورٹی کی وجہ سے بم دھماکے میں زیادہ جانی نقصان نہیں ہوا ہے۔زخمیوں کو سول اسپتال میں منتقل کردیا گیا ہے۔

واضح رہے کہ پاکستان کے مختلف علاقوں میں داؤدی بوہرہ فرقے سے تعلق رکھنے والے لوگ آباد ہیں لیکن ان کی زیادہ تر تعداد کراچی ہی میں مقیم ہے۔بوہرے اہل تشیع ہی کا ایک ذیلی فرقہ ہیں۔