.

انتخابات 2013ء میں کوئی دھاندلی نہیں ہوئی تھی:نواز شریف

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

پاکستان کی عدالتِ عظمیٰ کے تین رکنی کمیشن نے مئی 2013ء میں منعقدہ عام انتخابات کے دوران مبینہ دھاندلیوں کی تحقیقات سے متعلق اپنی رپورٹ جاری کردی ہے۔اس میں عدالتی کمیشن نے قراردیا ہے کہ انتخابات مجموعی طور پر قانون کے مطابق اور منصفانہ انداز میں منعقد ہوئے تھے۔

وزیراعظم نواز شریف نے جمعرات کی شام عدالتی کمیشن کی رپورٹ کے اجراء کے بعد قوم سے نشری خطاب میں کہا ہے کہ انتخابات میں کسی بھی سطح پر کوئی دھاندلی نہیں ہوئی تھی اور یہ آزادانہ اور منصفانہ تھے۔

انھوں نے کہا ہے کہ ''سیاسی جماعتوں نے انتخابات میں دھاندلیوں سے متعلق کوئی ثبوت فراہم نہیں کیے تھے۔عدالتی کمیشن کے نتائج کو دیکھیں تو یہ نہیں کہا جا سکتا کہ نتائج عوامی مینڈیٹ کے خلاف تھے''۔

وزیراعظم نے کہا کہ ''تحقیقاتی کمیشن کی جامع رپورٹ نے نہ صرف ہمارے موقف کی توثیق کردی ہے بلکہ اس سے پاکستانی عوام کے مینڈیٹ کی بھی توثیق ہوئی ہے۔اب تحقیقاتی کمیشن نے 2013ء میں منعقدہ انتخابات کی تصدیق کردی ہے تو الزامات کا باب ہمیشہ ہمیشہ کے لیے بند ہو جانا چاہیے''۔

انھوں نے عمران خان کی جماعت پاکستان تحریکِ انصاف کی انتخابات میں مبینہ دھاندلیوں کے خلاف احتجاجی تحریک کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ ''شفاف اور منصفانہ انتخابات کو متنازعہ بنا دیا گیا تھا اور یہ ہماری تاریخ کا ایک افسوس ناک باب ہے،اس کو بآسانی فراموش نہیں کیا جاسکے گا''۔

میاں نوازشریف نے دعویٰ کیا کہ ''دنیا کی طرح ہم بھی یہ جانتے تھے کہ انتخابات میں کوئی دھاندلی نہیں ہوئی تھی۔ ہمیں امید ہے کہ جن لوگوں نے اپنے ہم وطنوں کا قیمتی وقت ضائع کیا ہے،وہ بھی اب اس بات کو سمجھ لیں گے''۔

''ہم عدالتی کمیشن کی رپورٹ کو ایک سنگ میل کے طور پر لیتے ہیں۔آئیے اب پسماندگی کے بجائے خوش حالی اور ترقی کے ایک نئے سفر کا آغاز کریں۔اس ملک کی تاریخ میں پہلی مرتبہ حکومت نے آزادانہ اور شفاف تحقیقات کرائی ہیں اور تمام جماعتوں کو اپنا اپنا نقطہ نظر پیش کرنے کے لیے برابری کی بنیاد پر شفاف انداز میں موقع مہیا کیا گیا ہے''۔انھوں نے مزید کہا۔

وزیراعظم نے یہ دعویٰ بھی کیا کہ آج کا پاکستان دو سال سے پہلے سے کہیں بہتر ہے۔ہماری معیشت روز بروز بہتر ہورہی ہے اور بین الاقوامی سطح پر ہمارے وقار میں اضافہ ہورہا ہے۔

انھوں نے ملک کو دہشت گردی سے پاک کرنے کے عزم کا اعادہ کیا اور کہا کہ ''اب ہم آپریشن ضربِ عضب کے نتائج دیکھ سکتے ہیں۔ہمارے دیہی اور شہری علاقوں کو بہت جلد دہشت گردی سے پاک کردیا جائے گا''۔

انھوں نے کہا کہ اس وقت ہمیں قومی سطح پر سیلاب کا سامنا ہے اور اپنے ہم وطنوں کی مدد کرنی چاہیے۔میں تمام پاکستانیوں سے اپیل کرتا ہوں کہ وہ سیلاب سے متاثرہ اپنے بھائیوں اور بہنوں کی مدد کریں۔