.

صوبہ پنجاب کے وزیرداخلہ خودکش بم دھماکے میں جاں بحق

بم دھماکے کی شدت سے شجاع خان زادہ کے سیاسی دفتر کی عمارت زمین بوس

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

صوبہ پنجاب کے وزیرداخلہ ریٹائرڈ کرنل شجاع خان زادہ ضلع اٹک کے گاؤں شادی خان میں اپنے سیاسی دفتر پر خودکش بم حملے میں جاں بحق ہوگئے ہیں۔

شادی خان سے عینی شاہد بختیار صفدر نے العربیہ ڈاٹ نیٹ اردو کو بتایا ہے کہ صوبائی وزیر داخلہ کے ایک قریبی عزیز کا چند روز قبل انتقال ہوا تھا۔مرحوم کی تعزیت کے سلسلے میں اتوار کو ان کے پاس لوگ آرہے تھے۔اس دوران حملہ آور نے ان کے درمیان آ کر خود کو دھماکے سے اڑا دیا ہے۔بم دھماکا اس قدر شدید تھا کہ اس سے شجاع خان زادہ کے سیاسی دفتر کی عمارت مکمل طور پرزمین بوس ہوگئی ہے اور وہاں موجود افراد اس کے ملبے تلے دب گئے۔

انھوں نے بتایا کہ بم دھماکے میں تباہ ہونے والی عمارت ایل شکل میں ہے اور اس کی چھت قریباً دس مرلے (ڈھائی ہزار فٹ) پر بنی ہوئی تھی۔دھماکا اس کے بڑے ہال میں ہوا ہے اور اس کے ساتھ واقع چھوٹے کمروں کی چھتیں بھی زمین بوس ہوگئی ہیں۔اس وقت سو،ڈیڑھ سو افراد عمارت میں موجود تھے۔دھماکے سے نزدیک واقع مکانوں کو بھی نقصان پہنچا ہے اور ان کی کھڑکیوں اور دروازوں کے شیشے ٹوٹ گئے ہیں۔۔

پولیس حکام کے مطابق خودکش بم دھماکے میں سترہ افراد جاں بحق ہوئے ہیں۔ان میں اٹک کی تحصیل حضرو کے ڈپٹی سپرنٹینڈنٹ پولیس (ڈی ایس پی) شوکت شاہ بھی شامل ہیں۔دھماکے کے وقت عمارت میں دس اور پولیس اہلکار بھی موجود تھے۔بختیار صفدر نے مزید بتایا ہے کہ جائے وقوعہ پر امدادی سرگرمیاں جاری ہیں اور سکیورٹی فورسز کے اہلکار کسی کو نزدیک جانے کی اجازت نہیں دے رہے ہیں۔رات تک ملبے سے چودہ لاشیں اور تیئس زخمیوں کو نکال لیا گیا ہے۔زخمیوں کو اٹک ،راول پنڈی اور اسلام آباد کے اسپتالوں میں منتقل کردیا گیا ہے۔تین شدید زخمی اسپتال میں دم توڑ گئے ہیں۔

پنجاب کے انسپکٹر جنرل پولیس مشتاق سکھیرا نے اس خودکش بم دھماکے میں چودہ افراد کی ہلاکت کی تصدیق کی ہے۔وزارت داخلہ کے ذرائع نے دعویٰ کیا ہے کہ کالعدم لشکر جھنگوی نے کرنل شجاع خان زادہ پر خود کش حملے کی ذمے داری قبول کی ہے۔ان ذرائع کے بہ قول گذشتہ ماہ لشکر جھنگوی کے سربراہ ملک محمد اسحاق کی ضلع مظفر گڑھ میں ایک مبینہ پولیس مقابلے میں ہلاکت کے بعد سے انھیں دھمکیاں مل رہی تھیں۔

مقتول کرنل شجاع خان زادہ کو اکتوبر 2014ء میں محکمہ داخلہ کا قلم دان سونپا گیا تھا اور وہ صوبے میں دہشت گرد گروپوں کے خلاف کارروائیوں کی نگرانی کررہے تھے۔گذشتہ مہینوں کے دوران صوبہ پنجاب میں کالعدم لشکر جھنگوی اور کالعدم تحریک طالبان پاکستان (ٹی ٹی پی) سے تعلق رکھنے والے متعدد دہشت گردوں کو گرفتار کیا گیا ہے۔

وزیراعظم میاں نواز شریف نے صوبائی وزیرداخلہ پر خودکش بم حملے کی مذمت کی ہے۔وزیرداخلہ چودھری نثار علی خان نے واقعے کی مذمت کرتے ہوئے وفاقی اور صوبائی اداروں کو جائے وقوعہ پر امدادی سرگرمیاں جلد سے جلد پایہ تکمیل کو پہنچانے کی ہدایت کی ہے۔