.

شمالی وزیرستان:سرحدی چوکی پر حملے میں آرمی میجر شہید

سکیورٹی فورسزکی جوابی کارروائی میں پانچ جنگجو ہلاک ،حملہ آور لاشیں ساتھ لے گئے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

پاکستان کے شورش زدہ قبائلی علاقے شمالی وزیرستان میں ایک چیک پوسٹ پر حملے میں آرمی کے ایک میجر شہید جبکہ سکیورٹی اہلکاروں کی جوابی کارروائی میں پانچ جنگجو ہلاک ہوگئے ہیں۔

اطلاعات کے مطابق مشتبہ جنگجوؤں نے شمالی وزیرستان کی تحصیل میرعلی کے علاقے سپن وام میں ڈنڈی کچھ اتوار کی رات چیک پوسٹ پر حملہ کیا تھا۔یہ چیک پوسٹ افغانستان کی سرحد کے نزدیک واقع کاکا زیارت کے علاقے میں واقع ہے اور سرحد پارافغان صوبہ خوست واقع ہے۔

سکیورٹی ذرائع نے جنگجوؤں کے حملے میں شہید ہونے والے میجر کی شناخت اسماعیل کے نام سے کی ہے۔سکیورٹی اہلکاروں نے جوابی فائرنگ کرکے پانچ جنگجوؤں کو ہلاک کردیا ہے۔

سکیورٹی ذرائع نے مزید بتایا ہے کہ حملہ آوروں نے ہلکے اور بھاری ہتھیار استعمال کیے تھے۔وہ رات کی تاریکی سے فائدہ اٹھا کر بھاگ جانے میں کامیاب ہوگئے ہیں اور وہ اپنے ساتھی جنگجوؤں کی لاشیں بھی ساتھ لے گئے ہیں۔

پاکستان کی سکیورٹی فورسز جون 2014ء سے شمالی وزیرستان میں کالعدم تحریک طالبان پاکستان (ٹی ٹی پی) اور دوسرے دہشت گرد گروپوں کے خلاف آپریشن ضربِ عضب کے نام سے ایک بڑی کارروائی کررہی ہیں۔پاک فوج نے جون میں آپریشن ضربِ عضب کا ایک سال پورا ہونے پر اطلاع دی تھی کہ شمالی وزیرستان میں فضائی حملوں اور زمینی کارروائیوں میں قریباً اٹھائیس سو جنگجو مارے جا چکے ہیں۔

لیکن شمالی وزیرستان کے افغان سرحد کے نزدیک واقع دشوار گذار پہاڑی علاقوں میں ابھی تک ٹی ٹی پی یا دوسرے گروپوں کے جنگجو اپنی خفیہ کمین گاہوں میں موجود ہیں اور وہ سکیورٹی فورسز اور عام شہریوں پر وقفے وقفے سے حملے کرتے رہتے ہیں۔تاہم آپریشن ضربِ عضب کے نتیجے میں پاکستان میں دہشت گردی کے واقعات میں نمایاں کمی واقع ہوئی ہے۔