.

بھارتی کرکٹ بورڈ پاک بھارت میچ کولکتہ منتقل کرنے پر تیار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

پاکستان کے مطالبے پر بھارتی کرکٹ بورڈ 19 مارچ کو ہونے والے پاک بھارت میچ کو سیکیورٹی وجوہات کی بنا پردھرم شالا سے کولکتہ منتقل کرنے پر تیار ہو گیا۔

پاکستان نے سیکیورٹی وجوہات کی بنا پر بی سی سی آئی سے پاک بھارت میچ کولکتہ یا موہالی منتقل کرنے کا مطالبہ کیا تھا جب کہ بی سی سی آئی نے ٹی ٹوئنٹی ورلڈ کپ کا سب سے بڑا ٹاکرا دھرم شالا سے کولکتہ منتقل کرنے پر رضا مندی ظاہر کردی تاہم اس کا حتمی اعلان آئی سی سی کرے گا۔

پاکستان اور ہندوستان کے درمیان ورلڈ ٹی ٹوئنٹی میں 19 مارچ کو ہونے والا میچ اب دھرم شالہ میں نہیں ہو گا۔ واضح رہے کہ معاملہ اس وقت سامنے آیا ہے جب ریاست ہماچل پردیش کے وزیر اعلیٰ کی جانب سے سیکیورٹی کی عدم فراپمی کے بیان پر پاکستان نے سیکیورٹی خدشات کا اظہار کرتے ہوئے ٹیم ہندوستان بھیجنے سے روکنے کا فیصلہ کیا اور پہلے سیکیورٹی کا جائزہ لینے کے لیے ماہرین کی ٹیم دھرم شالہ بھیجی۔

پی سی بی ڈائریکٹر میڈیا کے مطابق ہندوستان میں سیکیورٹی انتظامات کا جائزہ لینے والے پاکستانی وفد نے دھرم شالہ میں پاکستان ٹیم کی سیکیورٹی کے حوالے سے منفی رپورٹ وزرات داخلہ کو بھجوائی ہے۔

سیکورٹی وفد کی رپورٹ کے مطابق موجودہ صورت حال میں پاکستان ٹیم کا میچ کھیلنے کے لیے دھرم شالہ جانا خطرناک بھی ہوسکتا ہے، دھرم شالہ پولیس اور انتظامیہ نے سیکورٹی کی یقین دہانی تو کرائی ہے لیکن کسی گڑ بڑ کی صورت میں انتظامیہ کے پاس فوری سدباب کے لیے زیادہ سہولیات نہیں۔