.

"پاناما لیکس تحقیقات ایف آئی اے سے کروا لیں"

چوہدری نثار کا عمران خان کے من پسند افسران کی ٹیم بنانے کا اعلان

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

پاکستان کے وفاقی وزیر داخلہ چوہدری نثار علی خان کا کہنا ہے کہ وہ پاناما لیکس پر شروع کی جانے والی حکومتی تحقیقات پر اپوزیشن کی جانب سے عدم اعتماد کو دور کرنے کے لئے ان آف شور اکائونٹس کی تحقیقات وفاقی تحقیقاتی ادارے (ایف آئی اے) سے کروانے کے لیے تیار ہیں۔

پاکستان کے دارلحکومت کے جڑواں شہر راولپنڈی میں ایک تقریب میں پاناما لیکس کے حوالے سے صحافیوں کے سوالات کے جواب میں چوہدری نثار علی خان کا کہنا تھا کہ تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان اگر تحقیقات ایف آئی اے سے کروانا چاہتے ہیں تو وزارت داخلہ اس کے لیے تیار ہے لیکن اس کا فیصلہ وزارت داخلہ نہیں کرتی، عمران خان ایف آئی اے میں جس بھی افسر یا افسران کی ٹیم کا نام لیں گے، اسی کو بااختیار تحقیقاتی ٹیم بنا دیا جائے گا، مگر اب صرف الزام تراشی نہیں ہونی چاہیے، کوئی واقعہ ہوتا ہے تو قوم کے ذہن کو مفلوج کر دیا جاتا ہے۔"

نثار نے دعویٰ کیا کہ اپوزیشن جماعتیں ان آف شور اکائونٹس کی مخلصانہ تحقیقات کرنے کی بجائے الزام تراشی کرکے میڈیا میں ایک ہوا بنا رہی ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ پاناما لیکس کے ذریعے سامنے آنے والی معلومات فی الحال صرف الزام ہے، روس، برطانیہ، ارجنٹائن سمیت دیگر ممالک نے کہا یہ سب معلومات جھوٹ ہے، صرف وزیر اعظم پاکستان نے نوٹس لے کر خود تقریر کی اور جوڈیشل کمیشن بنانے کا اعلان کیا۔

واضح رہے کہ 5 روز قبل انٹرنیشنل کنسورشیم آف انوسٹیگیٹیو جرنلسٹس (آئی سی آئی جے) نے بیرون ملک ٹیکس کے حوالے سے کام کرنے والی پاناما کی مشہور قانونی فرم موزیک فانسیکا کی افشاء ہونے والی انتہائی خفیہ دستاویزات میں پاکستان سمیت دنیا کی کئی طاقت ور سیاسی شخصیات کے 'آف شور' مالی معاملات عیاں ہوئے تھے۔

بعد ازاں وزیراعظم نواز شریف نے پانامہ لیکس کے معاملے پر قوم سے سرکاری ٹی وی پر خطاب میں سپریم کورٹ کے ریٹائرڈ جج کی سربراہی میں ایک اعلیٰ سطح کا جوڈیشل کمیشن قائم کرنے کا اعلان کیا تھا۔ ابھی تک کسی بھی ریٹائرڈ جج نے اس کمیشن کی سربراہی کے لئے حامی نہیں بھری ہے۔