مردان کچہری دہرے بم دھماکوں سے گونج اٹھی، 12 افراد جاں بحق

خودکش بمبار نے گرینیڈ پھینکنے کے بعد خود کو دھماکے سے اڑالیا، 52 زخمی ہسپتال منتقل

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

پاکستان کے صوبہ خیبرپختونخوا کے ضلع مردان میں ایک خودکش حملہ آور کی جانب سے گرینیڈ پھینکنے کے بعد خود کو دھماکے سے اڑائے جانے کے نتیجے میں 12 افراد جاں بحق اور 52 زخمی ہوگئے ہیں۔

مردان میں ریسکیو سروسز کے سربراہ نے میڈیا سے بات کرتے ہوئے بتایا کہ "پہلے ایک چھوٹا دھماکا ہوا جس کے تھوڑی دیر ایک بڑا دھماکا ہوگیا۔ ابھی تک جائے حادثہ سے وکلاء، پولیس اہلکاروں اور عام شہریوں کی 12 لاشیں نکال لی گئی ہیں۔ اس کے علاوہ 52 زخمیوں کو موقع سے ہسپتالوں میں منتقل کردیا گیا ہے۔

پاکستان میں سرگرم کالعدم شدت پسند گروپ "جماعت الاحرار" نے اس دھماکے کی ذمہ داری قبول کر لی ہے۔

دھماکے کے فورا بعد سیکیورٹی فورسز نے علاقے کو گھیرے میں لے کر خالی کروالیا۔ ابھی جائے حادثہ پر تحقیقات کا عمل جاری ہے۔

اس حملے سے کچھ ہی گھنٹے قبل صوبائی دارالحکومت پشاور کے مضافات میں مسیحی کالونی پر چار مسلح افراد کی جانب سے حملہ کیا گیا جس کو پاکستانی فوج نے بروقت کارروائی کرتے ہوئے ناکام بنا دیا تھا۔ اس حملے کی ذمہ داری بھی جماعت الاحرار نے ہی قبول کی تھی۔

ورسک روڈ حملے میں چار دہشت گردوں کے علاوہ ایک شہری کی ہلاکت کی خبر سامنے آئی ہے۔ اس کے علاوہ حملے میں دو فوجی، ایک پولیس اہلکار اور دو نجی سیکیورٹی اہلکار زخمی ہوگئے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں