.

پنجابی جوڑے کی پہلی محبت 95 سال کی عمر میں کامیاب!

غلام فرید اور حیاتہ بی بی خود بوڑھے مگران کی محبت آج بھی جوان ہے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

عشق ومحبت کے میدان میں فراق و وصال کی ویسے تو ان گنت داستنانیں مشہور ہیں مگر محبت کے بعض واقعات حقیقی ہونے کے باوجود افسانوی معلوم ہوتے ہیں۔ پہلی محبت کی کامیابی کی ایک ایسی ہی مثال حال ہی میں صوبہ پنجاب کے ایک نواحی علاقے میں اس وقت سامنے آئی جب ایک 95 سالہ بوڑھے غلام فرید اور 90 سالہ حیاتہ بی بی نے رشتہ ازدواج میں منسلک ہو کر بقیہ زندگی ایک دوسرے کی خدمت میں گذارنے کا فیصـلہ کیا۔

غلام فرید اور حیاتہ بی بی کے فراق و وصال کی داستان پرمبنی ایک رپورٹ ’العربیہ‘ کے پروام ’صباح العربیہ‘ میں نشر کی گئی۔

رپورٹ کے مطابق غلام فرید اور حیاتہ بی بی آج سے 75 برس ایک دوسرے کی محبت کے اسیر ہوگئے تھے۔ غلام فرید نے حیاتہ بی بی کو بیاہ لانے کے عزم کے لیے اس کے والدین کو شادی کا پیغام بھیجا مگر دونوں خاندانوں کی عدم رضامندی کے نتیجے فرید اور حیاتہ کا خواب شرمندہ تعبیر نہ ہوسکا۔ دونوں کے دلوں میں محبت کے جذبات ان کے ایک دوسرے سے دور ہونے اور دونوں کی الگ الگ مقامات پر شادیوں نے بھی ختم نہ کیے۔ غلام فرید کی ایک دوسری خاتون سے شادی ہوئی جب کہ حیاتہ کی بھی ایک شخص سے شادی ہوگئی۔ دونوں کے بچے بچیاں اور پوتے پوتیاں بھی جوان ہیں۔

’العربیہ‘ سے بات کرتے ہوئے غلام فرید نے بتایا کہ ان کے اور حیاتہ بی بی کے بچے اور پوتے پوتیاں بھی ہیں۔ حیاتہ کا شوہر فوت ہوا توغلام فرید نے اسے دوبارہ شادی کا پیغام بھیجا جس کے بعد دونوں نے شادی یا حتمی فیصلہ کرتے ہوئے اپنی بقیہ زندگی ایک دوسرے کی خدمت میں وقف کرنے کا اعلان کیا ہے۔

حیاتہ نے بتایا میرے شوہراورغلام فرید کی اہلیہ کی فوتگی کے بعد ہمارے درمیان رابطے تو بحال ہوئے مگر ہمیں شادی پر کچھ تحفظات تھے۔ اب ہمارے بچے اور پوتے پوتیاں ہوچکے ہیں۔ مگر ہمارے بچوں نے ہماری پہلی محبت کو پایہ تکمیل تک پہنچانے کے ہمارے ساتھ تعاون کیا۔

دونوں کی شادی اگرچہ کسی دھوم دھام سے تو نہیں ہوئی مگر دونوں کے دلوں میں پیرانہ سالی کے باوجود پہلی محبت اب بھی جوان ہے۔

کسی عرب شاعر شاید ایسے ہی موقع کے لیے کہا تھا کہ

’اپنے دل کو اس خواہش کی طرف موڑ دیں جسے آپ چاہتے ہیں ۔۔۔ محبت وہی ہوتی ہےجو پہلے محبوب سے ہو‘۔