.

کالعدم ٹی ٹی پی کا سابق ترجمان احسان اللہ احسان پاک فوج کے حوالے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

کالعدم تحریکِ طالبان پاکستان (ٹی ٹی پی) کے سابق ترجمان اور کالعدم جماعت الاحرار کے کمانڈر احسان اللہ احسان نے خود کو سکیورٹی فورسز کے حوالے کردیا ہے۔

اس بات کا اعلان پاک فوج کے شعبہ تعلقات عامہ (آئی ایس پی آر) کے ڈائریکٹر جنرل ،میجر جنرل آصف غفور نے سوموار کے روز ایک نیوز کانفرنس میں کیا ہے۔انھوں نے صحافیوں کو ملک میں دہشت گردوں اور جرائم پیشہ عناصر کے خلاف جاری آپریشن ردّ الفساد میں اب تک ہونے والی پیش رفت کے بارے میں بتایا ہے۔

انھوں نے کہا:’’ پاکستان کے عوام ،ریاست اور اداروں نے ملک کی سلامتی کی صورت حال کی بہتری کے لیے نمایاں پیش رفت کی ہے اور جو لوگ سرحد پار سے پاکستانی سرزمین پر حملوں کی منصوبہ بندی کررہے تھے،انھوں نے اب اپنے طور طریقوں میں غلطی کی جانب دیکھنا شروع کردیا ہے‘‘۔

پاک فوج کے ترجمان نے کہا:’’ پاکستان کی اس سے بڑی کامیابی اور کیا ہوسکتی ہے کہ اب ہمارے بڑے دشمنوں نے بھی خود کو سکیورٹی فورسز کے حوالے کرنا شروع کردیا ہے‘‘۔

انھوں نے کہا کہ اب ریاست دوبارہ اپنی عمل داری قائم کررہی ہے۔کوئی سے بھی عناصر ریاست کو اس وقت تک چیلنج نہیں کرسکتے جب تک کہ ریاست خطرناک عناصر کا قلمع قمع کرنے کا عزم رکھتی ہے‘‘۔

واضح رہے کہ احسان اللہ احسان سنہ 2013ء تک کالعدم تحریک طالبان پاکستان کا ترجمان رہا تھا۔وہ اور پاکستانی طالبان کے بعض دوسرے سابق کمانڈر اسی سال اس دہشت گرد گروپ سے الگ ہوگئے تھے اور انھوں نے جماعت الاحرار کے نام سے اپنا نیا دھڑا بنا لیا تھا۔

احسان اللہ احسان کو اس نئے دھڑے کا ترجمان مقرر کیا گیا تھا۔انھوں نے تب کہا تھا کہ ٹی ٹی پی کے 70 سے 80 فی صد کمانڈر اور جنگجو جماعت الاحرار میں شامل ہوگئے ہیں۔ان میں سب سے معروف عمر خراسانی تھا۔

اس گروپ نے حالیہ برسوں کے دوران میں ملک کے مختلف علاقوں میں دہشت گردی کے متعدد حملوں کی ذمے داری قبول کرنے کے دعوے کیے تھے۔اسی گروپ نے اس سال کے اوائل میں لاہور کی مال روڈ تباہ کن بم حملے کی ذمے داری قبول کی تھی۔اس بم دھماکے میں پولیس کے چار سینیر افسروں سمیت تیرہ افراد جاں بحق اور ایک سو سے زیادہ زخمی ہوگئے تھے۔