.

سینیٹ کمیٹی کا بچوں سے زیادتی کے مجرموں کو پھانسی پر لٹکانے کا مطالبہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

پاکستان کی پارلیمان کے ایوانِ بالا سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے داخلہ نے بچوں کے اغوا اور ان سے جنسی زیادتی کے واقعات کی مذمت میں ایک قرار داد منظور کی ہے اور اس نے ایسے گھناؤنے جرائم کے مرتکبین کو پھانسی پر لٹکانے کی سفارش کی ہے۔

اسلام آباد میں سوموار کو قائمہ کمیٹی کا اجلاس سینیٹر عبدالرحمان ملک کی صدارت میں ہوا ۔ کمیٹی نے پولیس سے موبائل فون ایپلی کیشن وٹس ایپ پر ایک ہیلپ لائن قائم کرنے کا مطالبہ کیا ہے تاکہ وہاں بچوں سے زیادتی کے واقعات کی اطلاع دی جاسکے۔

اجلاس میں سینیٹر شاہی سیّد کی سربراہی میں ایک ذیلی کمیٹی قائم کرنے کا بھی اعلان کیا ہے جو چار ہفتوں میں بچوں سے زیادتی کے واقعات سے نمٹنے کے لیے اپنی سفارشات پیش کرے گی ۔

اجلاس میں قصور شہر میں اس ماہ کے اوائل میں اغوا اور جنسی زیادتی کے بعد قتل ہونے والی سات سالہ بچی زینب انصاری کے والد محمد امین انصاری نے بھی شرکت کی۔انھوں نے بتایا کہ قصور کی پولیس نے اس کیس میں مجرمانہ غفلت اور بے پروائی کا مظاہرہ کیا تھا۔

انھوں نے کمیٹی کو بتایا کہ یہ واقعہ 4 جنوری کو پیش آیا تھا ۔ہمارے خاندان نے اسی رات ریسکیو 15 کو اطلاع دے دی تھی لیکن پولیس نے زینب کو بازیاب کرانے کے لیے کوئی سنجیدہ کوشش نہیں کی تھی۔ان کا کہنا تھا کہ پولیس اہلکار ہمارے گھر میں آتے تھے اور چائے نوش فرما کر چلے جاتے تھے۔ پانچ دن گزرنے کے بعد بھی انھوں نے کچھ نہیں کیا تھا اور الٹا انھوں نے ہم سے رقم بھی اینٹھ لی تھی۔

غم زدہ والد کا کہنا تھا کہ اس دوران میں قصور میں ایک اور بچی سے زیادتی کا واقعہ پیش آچکا ہے لیکن پولیس اب اس کے والدین کو ڈرا دھمکا رہی ہے کہ وہ اس کیس کا اندراج نہ کرائے۔