.

تیونس رواں سال بُک فاؤنڈیشن کے کتاب میلے میں شرکت کرے گا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

جمہوریہ تیونس اور پاکستان نے علم وادب، فن وثقافت، آرکیالوجی ،منتخب کتب کے تراجم سمیت فنون لطیفہ کے مختلف شعبوں میں باہمی تعاون پر اتفاق کیا ہے۔

یہ اتفاق پیر کو مشیر وزیر اعظم عرفان صدیقی اور جموریہ تیونس کے پاکستان میں سفیر عادل العربی کے درمیان ملاقات میں طے پایا۔ تیونس کے سفیر کی پیر کو قومی تاریخ وادبی ورثہ ڈویژن میں ملاقات کے موقع پر عرفان صدیقی نے علم وادب اور فنون لطیفہ کے شعبوں میں تیونس کی گہری دلچسپی کا خیر مقدم کرتے ہوئے کہا کہ رواں سال کتاب میلے میں تیونس کے اہل علم کی کتب بھی شامل کی جائیں گی۔

نیشنل بُک فائونڈیشن کے زیراہتمام کتاب میلے میں تیونس کا بُک سٹال قائم ہونے سے ایک نئی مثبت روایت قائم ہوگی۔ دونوں ممالک کے درمیان تعاون کو عملی شکل دینے کے لئے پیش رفت سے علم دوستی میں اضافہ ہوگا۔ مشیر وزیر اعظم نے نیشنل بُک فائونڈیشن میں گوشہ ابن خلدون کے قیام میں تعاون پر تیونس کی حکومت اور سفیر کا شکریہ ادا کرتے ہوئے کہاکہ دونوں ممالک میں گہرے روابط استوار ہیں جنہیں تعاون کی عملی صورت دینے کے لئے مزید اقدامات کی ضرورت ہے۔

انہوں نے بتایا کہ قومی تاریخ وادبی ورثہ ترکی میں قائم ارسیکا کے تعاون سے بین الاقوامی خطاطی نمائش کا اہتمام کرچکا ہے جس کے نہایت مثبت اثرات مرتب ہوئے ہیں۔ اسی طرز پر تیونس کے ساتھ خطاطی، ادب وفنون لطیفہ کے مختلف شعبہ جات بشمول آرکیالوجی میں تعاون کے خواہاں ہیں۔ سفیر تیونس عادل العربی نے مشیروزیراعظم عرفان صدیقی کی علمی وادبی سرگرمیوں کے فروغ کے لئے گہری دلچسپی کو سراہتے ہوئے نیشنل بُک فائونڈیشن میں گوشہ ابن خلدون کے قیام پر شکریہ ادا کیا۔ انہوں نے کہا کہ تیونس کے کسی بڑے علمی ادارے میں ''گوشۂ اقبال'' قائم کر کے ہمیں خوشی ہو گی۔

تیونس کے سفیر نے دونوں ممالک کے درمیان اہل قلم کے باہمی دوروں کی پیشکش بھی کی۔ عادل العربی نے کہا کہ تیونس پاکستان کے علم وادب، فن وثقافت اور فنون لطیفہ کے مختلف شعبہ جات میں وسیع تر تعاون کا خواہاں ہے ۔قومی تاریخ وادبی ورثہ ڈویژن کے ساتھ شراکت داری سے تعاون کو فروغ دیں گے۔ بعد ازاں تیونس کے سفیر نے اپنی اہلیہ کے ہمراہ اسلام آباد میوزیم اور نیشنل لائبریری کا بھی دورہ کیا اور مختلف شعبہ جات دیکھے اور وہاں رکھے گئے فن پاروں اور کتب میں گہری دلچسپی لی۔