.

جوہری سازوسامان کی تجارت ، 7 پاکستانی کمپنیوں پر امریکی پابندی عائد

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

امریکا نے جوہری سامان کی تجارت سے تعلق کے شبہے میں سات پاکستانی کمپنیوں پر پابندی عائد کر دی ہے۔ یہ اقدام پاکستان کی نیوکلیئر سپلائی گروپ میں شمولیت کی کوششوں کے لیے نقصان دہ ثابت ہو سکتا ہے۔

اس حوالے سے پاکستانی حکومت کے ترجمان کا کوئی تبصرہ سامنے نہیں آیا ہے۔

امریکی وزارت تجارت کے زیر انتظام بیورو آف انڈسٹری اینڈ سکیورٹی نے 22 مارچ کو مذکورہ پاکستانی کمپنیوں کو اپنی "اینٹیٹی لسٹ" میں شامل کر کے ان پر پابندی عائد کی۔

بیورو کی جانب سے جاری رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ اس فہرست میں شامل کمپنیوں کے اثاثے منجمد نہیں کیے جاتے تاہم امریکی اور غیر ملکی کمپنیاں اس امر کی پابند ہیں کہ وہ فہرست میں شامل کمپنیوں کے ساتھ کسی قسم کے معاملات سے قبل اجازت نامہ حاصل کریں۔

امریکا کی یہ پابندی پاکستان کی جانب سے نیوکلیئر سپلائی گروپ (48 ممالک کا مجموعہ) میں شمولیت کی درخواست پر کاری ضرب ثابت ہو سکتی ہے۔ اس گروپ کا مقصد جوہری ہتھیاروں کی تیاری میں ممکنہ طور پر استعمال ہونے والے سازوسامان کی تجارت پر کنٹرول کے ذریعے جوہری اسلحے کے پھیلاؤ پر روک لگانا ہے۔

پاکستان نے 2016ء میں اس گروپ میں شامل ہونے کی درخواست دی تھی تاہم ابھی تک اس حوالے سے کوئی بڑی پیش رفت نہیں ہو سکی۔