پاکستان کی چھے رکنی نگران وفاقی کابینہ کی حلف برداری

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

پاکستان کی چھے رکنی نگران وفاقی کابینہ نے حلف اٹھا لیا ہے۔اسلام آباد میں ایوان صدر میں منعقدہ ایک تقریب میں صدر ممنون حسین نے نگران وزراء سے ان کے عہدوں کا حلف لیا۔

نئے وزراء عبوری دور میں ملک کا نظم ونسق چلانے کے لیے نگران وزیراعظم ریٹائرڈ جسٹس ناصر الملک کی معاونت کریں گے۔حلف اٹھانے والوں میں بنک ِدولت پاکستان کی سابق گورنر ڈاکٹر شمشاد اختر ، سابق رکن پارلیمان روشن خورشید بھروچہ ، بیرسٹر علی ظفر ، امریکا میں پاکستان کے سابق سفیر عبداللہ حسین ہارون ، اعظم خان اور محمد یوسف شیخ شامل ہیں ۔

نئی نگران کابینہ 25 جولائی کو عام انتخابات کے بعد نئی حکومت کی تشکیل تک امورِ مملکت چلائے گی اور ملک میں عام انتخابات کرائے گی ۔

نگران وزراء کے محکمے یہ ہیں:

عبداللہ حسین ہارون: وزارتِ امور خارجہ اور قومی سلامتی ڈویژن ۔انھیں دفاع اور دفاعی پیداوار کی وزارتوں کا اضافی منصب سونپا گیا ہے۔

ڈاکٹر شمشاد اختر : وزارتِ خزانہ ، ریونیو اور اقتصادی امور ، وزارتِ شماریات اور منصوبہ بندی ،ترقی اور اصلاحات ۔ان کے علاوہ تجارت ، ٹیکسٹائل اور صنعت وپیداوار کی وزارتوں کے قلم دان بھی ڈاکٹر شمشاد اختر کو سونپے گئے ہیں۔

اعظم خان : وزارتِ داخلہ ، وفاقی دارالحکومت انتظامیہ اور ترقی ڈویژن اور وزارت نارکوٹکس کنٹرول ۔اضافی منصب : وزارت برائے بین الصوبائی رابطہ۔

سید علی ظفر شاہ : وزارتِ قانون اور انصاف ، وزارت پارلیمانی امور ،وزارتِ اطلاعات ونشریات، قومی تاریخ اور ادبی ورثہ ۔

محمد یوسف شیخ : وزارتِ تعلیم اور پیشہ ورانہ تربیت ۔اضافی مناصب: وزارت برائے قومی صحت خدمات ، ریگولیشنز اور کو آرڈی نیشن ، وزارت ِ مذہبی امور اور بین المذاہب ہم آہنگی ۔

روشن خورشید بھروچہ : وزارتِ انسانی حقوق ،وزارت برائے کشمیر اور گلگت بلتستان اور وزارت برائے ریاستیں اور سرحدی امور ۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں