.

امریکی وزیر خارجہ کا پاک آرمی چیف سے افغانستان میں سیاسی مصالحتی عمل پر تبادلہ خیال

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

امریکی وزیر خارجہ مائیک پومپیو نے پاکستان کے آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ سے ٹیلی فون پر بات چیت کی ہے اور ان سے افغانستان میں سیاسی مصالحت کے عمل اور باہمی دلچسپی کے دوسرے امور پر تبادلہ خیال کیا ہے۔

امریکی محکمہ خارجہ کی خاتون ترجمان ہیتھر نوئرٹ نے جمعرات کو جاری کردہ ایک بیان میں بتایا ہے کہ مائیک پومپیو اور جنرل باجوہ نے امریکا اور پاکستان کے درمیان دوطرفہ تعلقات کے فروغ ،افغانستان میں سیاسی مصالحت کی ضرورت اور جنوبی ایشیا میں تمام جنگجو اور دہشت گرد گروپوں کو بلا تمیز نشانہ بنانے کے حوالے سے بات چیت کی ہے۔

امریکا ماضی میں بھی پاکستان سے افغانستان میں امن کے امکانات کے حوالے سے بات چیت کرتا رہا ہے ۔ پاکستان متعدد مرتبہ اپنے اس مؤقف کا ا عادہ کرچکا ہے کہ وہ اپنے پڑوسی ملک میں استحکام کے لیے ہر ممکن مدد وتعاون کو تیار ہے۔

امریکا اور پاکستان کے دوطرفہ تعلقات میں حالیہ مہینوں کے دوران میں سرد مہری آئی ہے مگر اس کے باوجود امریکا نے اس سال کے اوائل میں پاکستان کو یہ یقین دہانی کرائی تھی کہ وہ اس کے ساتھ دوطرفہ تعلقات کو توڑنا نہیں چاہتا ہے۔اس کے جواب میں پاکستان نے امریکا کو یہ یقین دہانی کرائی تھی کہ وہ اس کی حمایت سے افغان حکومت کی جانب سے طالبان کو امن بات چیت کی پیش کش کی مکمل حمایت کرتا ہے۔

دریں اثناء افغان صدر اشرف غنی نے طالبان کے خلاف عیدالفطر کے موقع پر ایک ہفتے کے لیے جنگ بندی کا اعلان کیا ہے۔طالبان نے فوری طور پر جنگ بندی کی اس پیش کش کا کوئی جواب نہیں دیا ہے۔افغان صدر کی ایک ٹویٹ کے مطابق سکیورٹی فورسز کی داعش سمیت دوسرے گروپوں کے خلاف کارروائیاں جاری رہیں گی۔