.

پشاور: اے این پی کے جلسے میں خودکش بم دھماکا، ہارون بلور سمیت 12 جاں بحق

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

پاکستان کے شمال مغربی صوبہ خیبر پختونخوا کے دارالحکومت پشاور میں عوامی نیشنل پارٹی ( اے این پی) کے ایک انتخابی جلسے میں خودکش بم دھماکا ہوا ہے جس کے نتیجے میں اس جماعت کے ایک انتخابی امیدوار ہارون بلور سمیت بارہ افراد جاں بحق اور تیس سے زیادہ زخمی ہوگئے ہیں۔

ابتدائی اطلاعات کے مطابق منگل کی شب پشاور کے علاقے یکہ توت میں اے این پی کے زیر اہتمام ایک جلسہ ہورہا تھا۔اس دورا ن میں ایک حملہ آور بمبار نے خود کو دھماکے سے اڑا دیا۔ہارون بلور دھماکے میں شدید زخمی ہوگئے تھے۔انھیں فوری طور پر نزدیک واقع اسپتال پہنچایا گیا جہاں وہ اپنے زخموں کی تاب نہ لاکر چل بسے ہیں۔

زخمیوں میں ان کا بیٹا دانیال بلور بھی شامل ہے۔تمام زخمیوں کو نزدیک واقع لیڈی ریڈنگ اسپتال میں منتقل کردیا گیا ہے۔ دہشت گردی کے اس واقعے کے بعد سکیورٹی فورسز کے اہلکار وں نے بم دھماکے کی جگہ کا گھیراؤ کر لیا ہے اور تحقیقات شروع کردی ہے۔

ہارون بلور صوبائی اسمبلی کے حلقہ پی کے 78 سے اے این پی کے امیدوار تھے۔وہ اے این پی کی سابق صوبائی حکومت میں سینیر وزیر بشیر احمد بلور کے بیٹے تھے۔بشیر بلور خود بھی 2012ء میں پشاور میں اے این پی کے جلسے میں طالبان کے ایک خود کش بمبار کے حملے میں جاں بحق ہوگئے تھے۔

واضح رہے کہ صوبہ خیبر پختونخوا میں عوامی نیشنل پارٹی کے قائدین اور کارکنان گذشتہ برسوں کے دوران میں طالبان اور دوسرے جنگجو گروپوں کے حملوں کا ہدف رہے ہیں اور اس جماعت کے کئی سرکردہ لیڈر اور کارکنان بم حملوں اور فائرنگ کے واقعات میں مارے جاچکے ہیں۔

صوبہ خیبر پختونخوا میں 25 جولائی کو ہونے والے عام انتخابات میں حصہ لینے والے کسی امیدوار پر یہ دوسرا بم حملہ ہے۔ چند روز قبل ضلع بنوں میں ایک انتخابی ریلی کے دوران میں بم دھماکے میں متحدہ مجلس عمل کے ایک امیدوار سمیت سات افراد زخمی ہوگئے تھے۔