.

مریم اور حسین نواز کے بیٹوں کو لندن میٹرو پولیس نے رہا کر دیا

دونوں نوجوان لندن میں اپنے فلیٹس کے سامنے احتجاج کرنے والوں سے الجھ پڑے تھے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

پاکستان مسلم لیگ (ن) کی رہنما مریم نواز کے بیٹے جنید صفدر اور ان کے بھائی حسین نواز کے صاحبزادے ذکریا حسین کو رہا کر دیا گیا۔ دونوں نوجوانوں کو لندن میٹرو پولیس نے شریف فیملی کے ملکیتی ایون فیلڈ ہائوس کے باہر جھگڑے کے بعد گرفتار حراست میں لیا گیا تھا اور بعد ازاں بغیر چارج کیے چھوڑ دیا گیا، تاہم واقعے کی تحقیقات جاری ہیں۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق گذشتہ روز مریم نواز کے بیٹے جنید صفدر اور حسین نواز کے بیٹے ذکریا اور ایون فیلڈ ہائوس کے باہر مظاہرہ کرنے والے ایک شخص کے درمیان تلخ کلامی ہاتھا پائی میں بدل گئی تھی۔ اسی دوران پولیس موقع پر پہنچی اور ایک نوجوان کو مکا مارنے کے الزام میں جنید صفدر کو گرفتار کرلیا۔ لندن پولیس نے حسین نواز کے بیٹے ذکریا کی گرفتاری کی بھی تصدیق کی تھی۔

جنید صفدر کا موقف تھا کہ ایون فیلڈ ہائوس کے باہر موجود مظاہرین نے ان پر تھوکا، حملہ کرنے کی کوشش کی اور چھتری اٹھا کر پھینکی۔ دوسری جانب جنید صفدر کی والدہ مریم نواز نے کہا کہ ایون فیلڈ فلیٹس کے باہر موجود پی ٹی آئی کے کارکن جب بھی جنید کو دیکھتے تھے تو گالیاں دیتے تھے اور کوئی بھی ہو گالیاں دینے پر رد عمل تو دیتا ہے۔ لندن پولیس کے مطابق واقعہ میں ایک معمولی زخمی شخص کو ہسپتال لے جایا گیا جسے طبی امداد دے کر فارغ کر دیا گیا۔

واضح رہے کہ ایون فیلڈ اپارٹمنٹس کے باہر گذشتہ چند روز سے سابق وزیراعظم نواز شریف کے حامی اور مخالفین کے درمیان نعرے بازی کا سلسلہ جاری ہے۔ نو جولائی کو بھی ایون فیلڈ فلیٹس کے باہر مشتعل افراد نے مظاہرہ کیا۔ اس موقع پر سابق وزیراعظم نواز شریف کے گھر میں داخلے کے وقت احتجاج کیا گیا جبکہ ان کے صاحبزادے حسین نواز کے فلیٹ کا دروازہ توڑنے کی بھی کوشش کی گئی۔

دوسری جانب مسلم لیگ (ن) کے مقامی رہنما اعجاز گل پر ٹرالی بھی پھینکی گئی۔ اس سے اگلے ہی روز ایون فیلڈ فلیٹس کے باہر مسلم لیگ (ن) اور پاکستان تحریک انصاف کے حامیوں کے درمیان ہاتھا پائی اور نعرے بازی کا واقعہ پیش آیا جس کے بعد پولیس نے مسلم لیگ برطانیہ کے صدر ناصر بٹ اور تحریک انصاف کے دو کارکنوں کو حراست میں لے لیا تھا۔

یاد رہے کہ احتساب عدالت نے 6 جولائی کو ایون فیلڈ ریفرنس میں سابق وزیراعظم نواز شریف کو 10 سال، ان کی صاحبزادی مریم نواز کو 7 سال جبکہ داماد کیپٹن (ر) صفدر کو ایک سال قید کی سزا کا حکم سنایا تھا۔

ادھر ایون فیلڈ ریفرنس میں ہی نامزد نواز شریف کے صاحبزادوں حسن اور حسین نواز کو احتساب عدالت اشتہاری قرار دے کر ان کا کیس الگ کر چکی ہے۔