.

عمران خان ووٹ ڈالنے کا عمل خفیہ نہ رکھنے پر الیکشن کمیشن طلب

حسین اور حسن نواز اور عمران خان کے دونوں بیتے عام انتخابات میں ووٹ ڈالنے کے لیے پاکستان نہیں آئے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

پاکستان تحریک ِ انصاف کے سربراہ عمران خان عام انتخابات کے دوران میں اپنے حلقہ انتخاب این اے 53 اسلام آباد 2 میں ووٹ ڈالتے وقت الیکشن کمیشن کے ضابطہ ٔ اخلاق کی خلاف ورزی کے مرتکب ہوئے ہیں اور انھیں الیکشن کمیشن نے 30 جولائی کو وضاحت کے لیے طلب کر لیا ہے۔

عمران خان اس حلقے سے سابق وزیراعظم شاہد خاقان عباسی کے خلاف امیدوار ہیں ۔انھوں نے ایک سرکاری اسکول میں قائم پولنگ مرکز میں اپنی ووٹ پرچی کو خفیہ طریقے سے نہیں ڈالا اور بیلٹ پیپر کو باکس میں ڈالنے کے بجائے پولنگ بوتھ سے باہر لے آئے اور میڈیا کے کیمروں کے سامنے اس پر مہر لگائی ۔انتخابی قانون کے تحت ووٹ ڈالنے کا عمل خفیہ رکھنا ضروری ہے۔اس کی خلاف ورزی قابل سزا جرم ہے۔

نواز شریف اور عمران خان کے بیٹے

دریں اثناء عمران خان کے دونوں بیٹے سلیمان عیسیٰ خان اور قاسم خان عام انتخابات میں اپنا حق رائے دہی استعمال کرنے کے لیے پاکستان نہیں آئے ۔دونوں بھائی برطانیہ میں اپنی والدہ جمائما خان کے ساتھ رہ رہے ہیں اور وہیں زیر تعلیم ہیں۔جمائما خان عمران خان سے طلاق کے بعد واپس برطانیہ چلی گئی تھیں اور دونوں بیٹوں کو بھی ساتھ لے گئی تھیں۔

عمران خان کے بڑے صاحبزادے سلیمان عیسیٰ خان کی اس وقت عمر 21سال اور چھوٹے صاحبزادے قاسم خان کی عمر 19سال ہے اور وہ ووٹ ڈالنے کے اہل ہیں مگر پاکستان میں موجود نہ ہونے کی وجہ سے اپنا حق رائے دہی استعمال نہیں کر سکے۔البتہ ان کی والدہ جمائما خان نے ایک ٹویٹ میں عمران خان کے لیے نیک خواہشات کا اظہار کیا ہے اور عام انتخابات میں ان کی کامیابی کی دعا کی ہے۔

راول پنڈ ی کی اڈیالا جیل میں قید سابق وزیراعظم محمد نواز شریف کے دونوں بیٹے حسین نواز اور حسن نواز بھی اپنا حق رائے دہی استعمال کرنے کے لیے پاکستان نہیں آئے ہیں۔ ان دونوں کے خلاف اسلام آباد کی احتساب عدالت میں بدعنوانیوں کے الزامات میں دائر ریفرنسز زیرسماعت ہیں اور عدالت نے انھیں عدم پیشی پر اشتہاری قرار دے رکھا ہے۔

حسین نواز اور حسن نواز کے ووٹ لاہور میں قومی اسمبلی کے حلقہ این اے 124 میں واقع علاقے گوال منڈی میں درج ہیں اور وہ اس وقت لندن میں واقع ایون فیلڈ فلیٹ میں قیام پذیر ہیں۔ان کی والدہ بیگم کلثوم نواز لندن میں زیر علاج ہیں اور بہن مریم نواز اپنے والد کے ساتھ اڈیالا جیل میں قید ہیں۔ان میں سے کوئی بھی اپنا ووٹ نہیں ڈال سکا ہے۔

میاں نواز شریف اور پاکستان مسلم لیگ (ن) کے صدر میاں محمد شہباز شریف کی والدہ بیگم شمیم اختر نے شریف خاندان کے دیگر افراد کے ہمراہ قومی اسمبلی کے حلقہ این اے 124 میں واقع اسلامیہ کالج ر یلوے روڈ میں قائم ایک پولنگ اسٹیشن میں اپنا ووٹ ڈالا ۔ اس موقع پر حمزہ شہبازشریف، ان کے مرحوم چچا عباس شریف کے دو صاحبزادے اور خاندان کی خواتین بھی بیگم شمیم اختر کے ساتھ تھیں۔

پولنگ اسٹیشن میں ان کی آمد کے موقع پر سکیورٹی کے سخت انتظامات کیے گئے تھے۔ بیگم شمیم اختر کی عمر 92 سال ہے اور وہ ضعیف العمر ہونے کی وجہ سے پیدل چل نہیں سکتی ہیں۔انھیں گاڑی سے وہیل چیئر پر پولنگ اسٹیشن کے اندر ووٹ ڈالنے کے لیے لے جایا گیا۔شریف خاندان کے دوسرے افراد نے بھی اسی پولنگ مرکز پر اپنے ووٹ ڈالے ہیں۔