.

ایرانی وزیر خارجہ جواد ظریف اسلام آباد پہنچ گئے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ایرانی وزیر خارجہ جواد ظریف پاکستانی حکام کے ساتھ اغوا کیے جانے والے سرحدی محافظین اور علاقائی صورتحال پر بات چیت کرنے کے لیے ’غیر متوقع‘ ایک روزہ دورے پر پاکستان پہنچ گئے۔

پاکستان پہنچنے پر نور خان ایئر بیس پر پاکستان میں موجود ایرانی سفیر مہدی ہنردوست اور وزارت خارجہ کےاعلیٰ حکام نے ایرانی سفیر کا استقبال کیا۔

سفارتی ذرائع کا کہنا ہے کہ ایک روزہ دورے پر آئے ہوئے جواد ظریف وزیرخارجہ خورشید محمود قریشی سے ملاقات کریں گے جبکہ وزیر اعظم عمران خان اور آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ سے بھی ملاقات کا امکان ہے۔

اس سے قبل ایرانی سفارتکار مہدی ہنردوست نے گزشتہ روز وزیر خارجہ خورشید محمود قریشی سے ملاقات کی جس میں ایرانی وزیر خارجہ کے ’عجلت‘ میں طے کیے جانے والے دورے کے حوالے سے گفتگو ہوئی۔

اس حوالے سے دفتر خارجہ کے ترجمان ڈاکٹر محمد فیصل نے سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر ٹویٹ کے ذریعے بتایا کہ ’ایرانی سفیر نے دفتر خارجہ میں وزیر خارجہ سے ملاقات کی۔

سفارتی ذرائع کا کہنا ہے کہ اغوا شدہ ایران کے سرحدی محافظوں کی بازیابی کا معاملہ ایرانی وزیر خارجہ کے دورے کے ایجنڈے میں سب سے زیادہ اہمیت کا حامل ہے۔

خیال رہے کہ 2 ہفتے قبل پاکستان کے صوبے بلوچستان سے متصل ایرانی سرحد پر تقریباً 12 سرحدی محافظوں کوعسکریت پسندوں نے اغوا کرلیا تھا جبکہ اس کی ذمہ داری ’جیش العدل‘ نامی عسکری تنظیم نے قبول کی تھی۔ ایرانی حکام کا کہنا ہے کہ عسکریت پسندوں نے سرحدی گارڈز کو اغوا کے بعد پاکستانی علاقے منتقل کر دیا تھا۔