.

معزز سعودی مہمان شام سات بجے نور خان ایئر بیس پر اتریں گے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان اتوار کی شام سات بجے نور خان ائیر بیس پر لینڈ کریں گے جہاں وزیراعظم عمران خان اپنی کابیبہ کے ہمراہ ان کے استقبال کے لیے موجود ہوں گے۔ تفصیلات کے مطابق کے مطابق سعودی تخت کے وارث اور ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان اسلام آباد کے دورہ کے دوران متعدد معاہدوں اور مفاہمت کی یاد داشتوں پر دستخط کئے جائیں گے۔

پاکستانی فضائی حدود میں داخل ہوتے ہی شاہی پرواز کو فضائیہ کے جے ایف 17 تھنڈر طیارے اپنے حصار میں لے لیں گے۔ شہزادہ محمد بن سلمان کی پاکستان آمد پر انہیں 21 توپوں کی سلامی دی جائے گی۔ پاک فضائیہ کا دستہ معزز مہمان کو سلامی دے گا۔ شہزادہ محمد بن سلمان کی گاڑی وزیراعظم خود چلائیں گے جبکہ ولی عہد محمد بن سلمان وزیراعظم ہاؤس میں قیام کریں گے۔

سعودی شاہی خاندان کے ارکان، وزراء اور ممتاز کاروباری شخصیات کا وفد بھی پاکستان آئے گا۔ سعودی ولی عہد کے دورے کے دوران سیکیورٹی کے فول پروف انتظامات کئے گئے ہیں۔ معزز مہمان کو وزیراعظم ہاؤس میں ظہرانہ اور ایوان صدر میں عشائیہ دیا جائے گا۔

سعودی وفد کی حفاظت کے لیے 4 سیکیورٹی حصارہوں گے۔ پولیس اور دیگر فورسز کے 4 ہزار سے زیادہ اہلکار تعینات کیے جائیں گے۔ پہلا حصار اسلام آباد پولیس اور دوسرا رینجرز کا ہو گا۔

تیسرا حصار فوجی اہلکاروں اور چوتھا شاہی گارڈز پر مشتمل ہو گا۔ اس موقع پر پارلیمنٹ ہاؤس اسلام آباد کی عمارت پر شہزادہ محمد بن سلمان کا قد آدم پورٹریٹ نصب کر دیا گیا ہے۔ پورٹریٹ کی لمبائی 120 فٹ اور چوڑائی 45 فٹ ہے۔ پورٹریٹ چیئرمین سینیٹ صادق سنجرانی نے ذاتی خرچ سے تیار کرایا گیا ہے۔

اس موقع پر سعودی ولی عہد وزیراعظم عمران خان، صدر پاکستان اور آرمی چیف سے ملاقات کریں گے۔ سعودی وفود کی جانب سے پاکستانی حکام کے ساتھ ملاقاتیں کی جائیں گی جبکہ ایوان صدر میں منعقدہ تقریب میں سعودی ولی عہد کو ملک کے اعلیٰ ترین سول اعزاز ’’نشان پاکستان‘‘ سے تکریم کی جائے گا۔