.

یوم پاکستان: مسلح افواج کی پریڈ پر’’پاکستان زندہ باد‘‘ کے فلک شگاف نعرے

سعودی عرب، آزربائیجان، ترکی، چین، سری لنکا اور برونائی کے چھاتا برداروں کا فری فال مظاہرہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یومِ پاکستان کیمناسبت سے اسلام آباد کے پریڈ گراؤنڈ میں مسلح افواج کی شاندار مشترکہ پریڈ کا انعقاد کیا گیا۔ پریڈ میں سعودی عرب ، چین، ترکی اور آذربائیجان کے دستے اور ہوابازشریک ہوئے جبکہ دل گرمانے والے فری فال کے مظاہرے میں سری لنکا اور برونائی کے بھی چھاتا بردرار شامل تھے۔

تقریب کے مہمان خصوصی ملائیشیا کے وزیراعظم مہاتیر محمد تھے جبکہ آذربائیجان کے وزیر دفاع کرنل۔جنرل ذاکر حسناوف، بحرین کے نیشنل گارڈز کے سربراہ اور اومان کے حکومتی حکام بھی خصوصی مہمان کی حیثیت سے شریک ہوئے۔ اس موقع پر حکومتی شخصیات، غیر ملکی سفارت کار اور اعلیٰ سول وعسکری حکام سمیت زندگی کے مختلف شعبہ جات سے تعلق رکھنے والی شخصیات تقریب میں شریک ہوئیں۔

صدرِ مملکت ڈاکٹر عارف علوی سمیت مہمانِ خصوصی کی آمد کے بعد گراؤنڈ میں تقریب کا آغاز پاکستان کے قومی ترانے اور تلاوت قرآن پاک کے ساتھ ہوا، جس کے بعد صدرِ مملکت کو مسلح افواج کے دستوں نے سلامی پیش کی اور صدر نے مسلح افواج کی پریڈ کا معائنہ کیا۔

صدر سلامی کے بعد پاک فضائیہ کے سربراہ ائیر چیف مارشل مجاہد انور خان کی سربراہی میں جنگی طیاروں نے صدرِ مملکت کو سلامی پیش کی جب کہ ائیرچیف نے کاکٹ پٹ سے براہِ راست پیغام بھی دیا۔

ائیر چیف کی سربراہی میں پاک فضائیہ کے ایف 16 طیاروں نے فلائی پاسٹ کیا اور اس دوران طیاروں کی گھن گھرج نے وفاقی دارالحکومت کا ماحول گرما دیا۔ ائیر چیف مارشل نے ایف 16 طیارے میں پریڈ گراؤنڈ کے چکر لگائے اور فضا میں بلند ہو گئے ۔جے ایف 17، ایف 16، میراج اور ایف 7 پی طیاروں نے بھی فلائی پاسٹ کیا۔

صدرِ مملکت عارف علوی نے تقریب کے شرکاء سے خطاب کرتے ہوئے کہا ہے کہ بھارت تسلیم کر لے کہ پاکستان ایک حقیقت ہے۔ پڑوسی ملک کا نامناسب رویہ خطے میں امن کیلئے خطرہ ہے۔ ہر مسئلہ بات چیت سے حل کرنا چاہتے ہیں۔ تمام ملکوں کی خود مختاری اور سلامتی کا احترام کرتے ہیں۔ امن کی خواہش کو ہماری کمزوری نہ سمجھا جائے۔ ہم پرامن قوم ہیں مگر اپنے دفاع سے ہرگز غافل نہیں۔

تالیوں کی گونج میں صدر مملکت نے دو ٹوک الفاظ میں کہا کہ بھارت کا رویہ غیرذمے دارانہ رہا ہے۔ بھارت نے دھمکی آمیز بیانات سے جنگ کی فضا قائم کی۔ پلوامہ حملے کے بعد بھارت نے بغیر ثبوت کے پاکستان پر الزامات عائد کیے۔ آزادی کا حصول قربانی کا متقاضی ہوتا ہے۔ دہشت گردی کے خلاف جنگ میں جانی ومالی قربانیاں دیں۔ پاکستان ابھرتی ہوئی معاشی قوت ہے۔ دہشت گردی دنیا کے امن کے لیے سب سے بڑا خطرہ ہے۔

افغانستان میں امن پاکستان میں دائمی امن کے لیے ناگزیر ہے۔ امن کے لیے پاکستان اپنا کردار ادا کرتا رہے گا۔ دہشت گردی دنیا کے امن کے لیے سب سے بڑا خطرہ ہے۔ انھوں نے شاندار پریڈ کے انعقاد پر مسلح افواج اور منتظمین کو مبارکباد دی۔

بعد میں پاک فوج، رینجرز، بحریہ کے دستوں نے مارچ پاسٹ کیا اور معزز مہمانوں کو سلامی دی۔ اندرون ملک تیار ہونے والے الخالد ٹینکوں کے دستے نے بھی مخصوص انداز میں سلامی پیش کی۔تقریب میں دفاعی سازو سامان کی نمائش کی گئی جس میں دشمن کو دندان شکن جواب دینے کی صلاحیت رکھنے والے الخالد سمیت دیگر ٹینکوں اور میزائلوں کی بھی نمائش کی گئی۔

پاکستان میں تیار کئے جانے والے جے ایف 17 کے فضائی مظاہرے نے اسلام آباد کی فضاوں میں سحر طاری کر دیا۔ اس کے بعد ترک فضائیہ کے سولو ہواباز نے رنگ جمایا۔ چین سے آنے والی چھ جہازوں کی فارمیشن نے فضا میں دل موہ لینے والے کرتب دکھائے ہوئے اسلام آباد کی فضاوں میں قوس قزا کے رنگ بکھیرے تو پریڈ گراونڈ پاک۔چین دوستی کے نعروں سے گونج اٹھی۔

اختتامی ایونٹ پاکستان کی بری، بحری اور فضائی فوج کے دستوں اور اسپیشل سروسز گروپ کے چھاتا برداروں کا فری فال مظاہرہ تھا۔ اس میں رنگ بھرنے کے لئے سعودی عرب، سری لنکا، برونائی، آزربائیجان کے ماہر چھاتا بردار بھی شامل تھے۔ فری فال کے اس مظاہرے کی قیادت ایس ایس جی کے سربراہ میجر جنرل طاہر مسعود بھٹہ کر رہے تھے۔

تقریب میں موجود مہمان وزیراعظم مہاتیر محمد کو پاکستان کا قومی پرچم پیش کیا گیا۔ انہوں نے سبز ہلالی پرچم کو بصدِ احترام بوسہ دیا۔