.

امام کعبہ الشیخ عبداللہ عواد الجہنی کا پاکستان آمد پر پُرتپاک خیر مقدم

آج فیصل مسجد میں نمازِ جمعہ پڑھائیں گے،وزیراعظم عمران خان ، صدر عارف علوی اور آرمی چیف سے ملاقاتیں کریں گے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

مکہ مکرمہ میں مسجد الحرام کے امام الشیخ عبداللہ عواد الجہنی پاکستان کے دورے پر جمعرات کو اسلام آباد پہنچ گئے ہیں۔پاکستان کے وفاقی وزیر برائے مذہبی نور الحق قادری اور دوسرے حکام نے ان کا شاندار خیر مقدم کیا ۔

الشیخ عواد اسلام آباد میں قیام کے دوران میں آج فیصل مسجد میں نمازِ جمعہ پڑھائیں گے اور اتوار کو چوتھی پیغام اسلام کانفرنس میں شرکت کریں گے ۔اس کانفرنس کا اہتمام پاکستان علماء کونسل نے کیا ہے۔کونسل کے چئیرمین علامہ طاہر محمود اشرفی کا کہنا ہے کہ اس کانفرنس کا مقصد بین المذاہب مکالمے اور مختلف فرقوں کے درمیان ہم آہنگی کے فروغ کے لیے لائحہ عمل وضع کرنا ہے۔

امام کعبہ وزیراعظم عمران خان ، صدر ڈاکٹر عارف علوی اور چیف آرمی اسٹاف جنرل قمر جاوید باجوہ کے علاوہ پاکستانی علماء سے ملاقاتیں کریں گے۔

الشیخ عبداللہ عواد الجہنی کا تعارف

ڈاکٹر عبداللہ عواد الجہنی کو اسلام کی چار متبرک مساجد ۔۔۔ مسجد الحرام ، مسجد نبوی ،مسجد قبا اور مسجد قبلتین ۔۔کی امامت کا شرف حاصل ہے۔ بیت اللہ شریف اور مسجد نبوی دنیا کی مقدس ترین جگہیں مانی جاتی ہیں۔ مسجد قبا مدینہ منورہ کی وہ تاریخی مسجد ہے جس کی بنیاد رسول اللہ ﷺ نے رکھی تھی۔اللہ تعالیٰ نے قرآن کریم میں اس مسجد کی تعریف فرمائی ہے۔ مسجد قبلتین مدینہ منورہ کی تین تاریخی مسجدمیں سے ایک ہے۔اس کی دو محرابیں ہیں۔ ایک مسلمانوں کے قبلۂ اوّل مسجدِ اقصیٰ بیت المقدس کی طرف اور دوسری بیت اللہ کی طرف۔ کیونکہ اس کی تعمیر تحویلِ قبلہ سے پہلے ہو گئی تھی۔

ان چاروں بابرکت مساجد کی امامت کا شرف حاصل کرنے والی عظیم شخصیت فضیلۃ الشیخ ڈاکٹر عبد اللہ بن عواد الجہنی 13 جنوری 1976ء کو مدینہ منورہ میں پیدا ہوئے تھے ،ان کے والدین دین سے خاص شغف رکھتے تھے ۔انھوں نے بچپن ہی میں قرآن کریم مکمل حفظ کر لیا تھا۔ 16 سال کی عمر میں دو مرتبہ بین الاقوامی مقابلہ حسن قراءت میں پہلی پوزیشن حاصل کی۔ مدینہ منورہ کی معروف عالمی یونیورسٹی (الجامعۃ الاسلامیہ) میں اعلیٰ تعلیم حاصل کی اور کلیۃ القرآن سے تدریسی سرٹیفکیٹ اعلیٰ اعزاز کے ساتھ حاصل کیا ۔

آپ کو 21 برس کی نوجوانی کی عمر میں پہلی مرتبہ مدینہ منورہ میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے مصلےپر تراویح کی امامت کا شرف حاصل ہوا۔ اس سے پہلے آپ مسجد قبلتین میں دو سال تک امام رہے تھے اور پھر چار سال تک مسجد قبا کی امامت کے فرائض سرانجام دیتے رہے تھے۔ 2005میں مسجد الحرام بیت اللہ شریف مکہ مکرمہ میں تراویح کی نماز کی امامت کی اور پھر وہاں آپ کو مستقل امام مقرر کردیا گیا ۔

آپ نے جید قراء سے نبی کریم ﷺ تک متصل اسناد حاصل کر رکھی ہیں ۔ان میں سر فہرست فضیلۃ الشیخ ابراہیم الاخضر اور مسجد نبوی کے امام فضیلۃ الشیخ ڈاکٹر علی بن محمد حذیفی شامل ہیں۔

آپ امامت کے ساتھ ساتھ درس وتدریس سے بھی شغف رکھتے ہیں۔ مدینہ یونیورسٹی سے فراغت کے بعد مدینہ منورہ میں اساتذہ فیکلٹی میں معلم کے فرائض انجام دیتے رہے اور اب مکہ مکرمہ کی اُم القریٰ یونیورسٹی میں پروفیسر ہیں۔