.

فوج کا احتسابی نظام ’’ان ایکشن‘‘:جاسوس لیفٹیننٹ جنرل کو قید، بریگیڈئر کو سزائے موت

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

پاکستان کی مسلح فوج کے سربراہ جنرل قمر جاوید باجوہ نے دو فوجی اور ایک سول افسر کو جاسوسی کی پاداش میں فیلڈ جنرل کورٹ مارشل عدالت کی جانب سے دی والی سزاؤں کی منظوری دے دی۔

سزا پانے والوں میں ریٹائرڈلفیٹینٹ جنرل جاوید اقبال شامل ہیں۔ انہیں آفیشل ایکٹ کے تحت 14 سال سزا بامشقت دی گئی ہے۔ ریٹائرڈ بریگیڈیٹر راجا رضوان کو سزائے موت دی گئی اور حساس ادارے کے سویلین افسر ڈاکٹر وسیم اکرم کو سزائے موت دی گئی۔

یاد رہے افسران کے خلاف کارروائی بیرونی ایجنسیوں کے لیے جاسوسی کے شبہے میں شروع کی گئی تھی۔ آئی ایس پی آر کے مطابق مشتبہ سول اور فوجی حکام کے خلاف پاکستان آرمی ایکٹ کے تحت الگ الگ فیلڈ جنرل کورٹ مارشل میں مقدمات چلائے گئے۔

فوج کے شعبہ تعلقات عامہ ’’آئی ایس پی آر ‘‘کا کہنا ہے گذشتہ دو سال میں مختلف عہدوں پر کام کرنے والے 400 سو افسران کو سزائیں دی گئی۔