.

حیدرآباد :مسافر ٹرین اور مال گاڑی میں تصادم ، ڈرائیور سمیت تین جاں بحق ، متعدد زخمی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

پاکستان کے جنوبی صوبہ سندھ کے ضلع حیدر آباد میں ایک مسافر ٹرین ایک مال گاڑی سے ٹکرا گئی ہے جس کے نتیجے میں تین افراد جاں بحق اور متعدد زخمی ہوگئے ہیں۔

مقامی میڈیا کی اطلاع کے مطابق جمعرات کی شام ساڑھے پانچ بجے کے قریب حادثہ حیدر آباد ریلوے اسٹیشن کے نزدیک پیش آیا ہے جہاں ملک کے سب سے بڑے شہر کراچی سے آنے والی جناح ایکسپریس پٹڑی پر کھڑی مال گاڑی سے پیچھے سے جا ٹکرائی ۔ جناح ایکسپریس لاہور جارہی تھی۔حادثے میں اس مسافر ریل گاڑی کا ڈرائیور اسلم چانڈیو جاں بحق ہوگیا ہے۔ مرنے والے دوسرے دو افرادکی شناخت سیّد نعمان علی اور یاسر بشیر کے نام سے کی گئی ہے۔ جائے حادثہ پر امدادی سرگرمیاں جاری تھیں اور زخمیوں کو لیاقت یونیورسٹی اسپتال منتقل کیا جارہا تھا۔

مسافر ٹرین کے ٹکرانے کے بعد مال گاڑی کی تین بوگیاں پٹڑی سے اتر گئیں۔مال گاڑی پر کوئلہ لدا ہوا تھا اور وہ یوسف والا جارہی تھی۔تصادم کے بعد جناح ایکسپریس کی کوئی بوگی پٹڑی سے نہیں اتری تھی ،البتہ اس کا انجن پٹڑی سے اتر گیا اور اس سے ٹریک کو بھی شدید نقصان پہنچا ہے۔

مال گاڑی کو متاثر بوگیوں سے الگ کرکے حیدر آباد کے ریلوے اسٹیشن منتقل کردیا گیا ہے۔ ریلوے حکام اور مزدور پٹڑی کی مرمت اور حیدرآباد سے زیریں اور بالائی شہروں کی جانب ٹرینوں کی آمد ورفت کی بحالی کے لیے کوشاں تھے۔حادثے کے بعد رینجرز اور پولیس کی بھاری نفری موقع پر پہنچ گئی تھی اور وہ وہاں جمع ہوجانے والے سیکڑوں افراد کو پیچھے ہٹانے میں مصروف تھے۔

مقامی لوگ بڑی تعداد میں حادثے کا شکار ہونے والی دونوں ٹرینوں کے ارد گرد جمع ہوگئے تھے جس سے امدادی کارروائیوں میں خلل پڑا ہے۔اس حادثے کے بعد کراچی سے آنے والی ٹرینوں کو حیدر آباد اور ملک کےشمال مشرقی علاقوں سے کراچی کی جانب جانے والی ٹرینوں کو کوٹری کے ریلوے اسٹیشن پر رو ک دیا گیا جس کی وجہ سے مسافر وہاں پھنس کر رہ گئے تھے۔

پاکستان کے وزیر ریلوے شیخ رشید احمد نے رات قریباً آٹھ بجے ٹویٹر پر جاری کردہ ایک ویڈیو پیغام میں کہا ہے کہ انھوں نے اس حادثے کی تحقیقات کا حکم دے دیا ہے اور اس کی رپورٹ چوبیس گھنٹے میں آجائے گی۔انھوں نے یہ بھی کہا کہ ریلوے ٹریک کی مرمت کے بعد گاڑیوں کی آمد ورفت بحال کردی گئی ہے۔