.

میرپور اور جہلم میں ہلکے زلزلے کے جھٹکے ،67 افراد زخمی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

پاکستان کے زیر انتظام ریاست آزاد جموں وکشمیر کے شہر میر پور اور بعض دوسرے علاقوں میں جمعرات کو ہلکے زلزلے کے نتیجے میں سڑسٹھ افراد زخمی ہوگئے ہیں۔میرپور سے متصل صوبہ پنجاب کے ضلع جہلم اور اس سے ملحقہ علاقوں میں بھی ہلکے زلزلے کے جھٹکے محسوس کیے گئے ہیں۔

میرپور کے ڈویژنل ہیڈ کوارٹر اسپتال کے میڈیکل سپرنٹنڈنٹ ڈاکٹر فاروق نور نے بتایا کہ اس بھونچال سے ٹھوٹھل ، کلیال اور میر پور کے ایف ایک سیکٹر میں واقع کچی آبادی میں لوگ زخمی ہوئے ہیں۔

پاکستان کے محکمہ موسمیات کے مطابق ریختر اسکیل پر زلزلے کی شدت 4.4 تھی اور اس کی گہرائی بارہ کلومیٹر تھی۔اس زلزلے کے بعد میر پور کے شہریوں میں خوف وہراس پھیل گیا اور وہ قرآنی آیات کا ورد کرتے اور ذکر اذکار کرتے سڑکوں پر نکل آئے۔

امریکا کے جیالوجیکل سروے کے مطابق ریختر اسکیل پر زلزلے کی شدت 4.7 تھی۔اس کی گہرائی دس کلومیٹر تھی اور اس کا مرکز میرپو شہر سے صرف چار کلومیٹر دور تھا۔

اسلام آباد میں قومی سیسمک مانیٹرنگ سنٹر نے جہلم سے چھے کلومیٹر شمال میں 4.4کی شدت کا زلزلہ ریکارڈ کیا ہے ۔اس کی گہرائی بارہ کلومیٹر تھی۔پنجاب کے دارالحکومت لاہور اور شمالی ضلع سیال کوٹ میں بھی زلزلے کے ہلکے جھٹکے محسوس کیے گئے ہیں جس کے بعد بہت سے افراد اپنے گھروں اور دفاتر سے باہر نکل آئے۔

میرپور میں دو روز قبل 5.6 کی شدت کا زلزلہ آیا تھا۔ اس کے نتیجے میں مرنے والوں کی تعداد اڑتیس ہوگئی ہے اور 459 افراد زخمی ہوئے ہیں۔پاکستان کی نیشنل ڈیزاسٹر مینجمنٹ اتھارٹی نے مرنے والوں کی تعداد پچیس بتائی ہے۔اس زلزلے سے میرپور میں زیادہ تباہی ہوئی ہے اور شہر اور اس کے نواحی علاقوں کی سڑکیں زمین میں دھنس گئی ہیں اور سیکڑوں مکانات منہدم ہوگئے ہیں۔

ضلع میر پور میں منگل کو زلزلے کے بعد ہنگامی صورت حال کے پیش نظر حکام نے ستائیس اور اٹھائیس ستمبر کو بھی اسکول بند رکھنے کا اعلان کیا ہے۔آزاد جموں وکشمیر یونیورسٹی نے بھی ستائیس اکتوبر کو ہونے والے تمام امتحانات ملتوی کردیے ہیں اور جمعہ کو ہونے والے امتحانی پرچے اب سات اکتوبر کو ہوں گے۔