.

نواز شریف کی بیرون ملک علاج کے لیے لاہور سے لندن روانگی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

پاکستان کے سابق وزیراعظم اور مسلم لیگ ن کے قائد نواز شریف عدالت سے اجازت ملنے کے بعد منگل کو علاج کی غرض سے برطانیہ روانہ ہو گئے ہیں۔ سابق وزیراعظم براستہ دوحا، لندن پہنچیں گے اور مسلم لیگ ن کے صدر اور نواز شریف کے بھائی شہباز شریف، ان کے ذاتی معالج ڈاکٹر عدنان اور دو ملازمین بھی اس سفر میں ان کے ہمراہ ہیں۔

نواز شریف کو بیرونِ ملک لے جانے کے لیے قطر کے شاہی خاندان کی وی آئی پی فضائی کمپنی قطر امیری فلائٹس کی ایئر ایمبولینس منگل کی صبح لاہور پہنچی تھی۔ اس ایئر بس اے تھری 19 طیارے میں آئی سی یو، آپریشن تھیٹر اور وینٹی لیٹر جیسی سہولیات بھی موجود ہیں۔

نواز شریف منگل کی صبح جاتی امرا سے اپنی والدہ اور بیٹی مریم نواز کے ہمراہ ایئرپورٹ کے لیے روانہ ہوئے جبکہ شہباز شریف ماڈل ٹاؤن سے آئے۔ مسلم لیگ ن کی سینیئر قیادت براہِ راست ہوائی اڈے پر پہنچی جہاں انھوں نے نواز شریف کا استقبال کیا اور انھیں رخصت کیا۔

نواز شریف کی روانگی سے قبل پاکستان مسلم لیگ (ن) کی ترجمان مریم اورنگزیب نے بتایا تھا کہ روانگی سے قبل ڈاکٹروں نے نواز شریف کا تفصیلی معائنہ کیا اور انھیں سفر کے دوران خطرات سے بچانے کے لیے سٹیرائڈز کی ہائی ڈوز اور ادویات دی گئی ہیں۔

مریم اورنگزیب کے مطابق ڈاکٹروں نے وہ تمام طبی احتیاط پیش نظر رکھی ہے جن کے ذریعے نواز شریف کا لندن تک محفوظ سفر یقینی ہو سکے۔اس سے قبل انھوں نے کہا تھا کہ ڈاکٹروں کا خیال ہے کہ نواز شریف کو علاج کے لیے شاید امریکہ لے جانا پڑے گا۔