.

ترکی اور پاکستان کے درمیان تجارت، عسکری تعاون سمیت مفاہمت کی 13 یادداشتوں پر دستخط

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ترک صدر طیب اردوان کے دورے کے موقع پر پاکستان اور ترکی کے درمیان باہمی تجارت، عسکری تربیت، ٹرانسپورٹ اور سیاحت کے فروغ سمیت 13 مختلف شعبوں میں تعاون بڑھانے کی مفاہمتی یاداشتوں پر دستخط ہوئے۔

پاکستان اور ترکی کی اسٹریٹجک تعاون کونسل کا اجلاس ہوا جس میں وزیراعظم عمران خان نے پاکستان اور ترک صدر طیب اردوان نے ترکی کی نمائندگی کی۔

اس موقع پر وزیراعظم عمران خان اور ترک صدر رجب طیب اردوان نے پاک ترک اکنامک فریم ورک سے متعلق مشترکہ اعلامیے پر دستخط کئے۔ اجلاس کے بعد باہمی تجارت کا حجم بڑھانے، ریلوے، ٹرانسپورٹ، پوسٹل سروسز، انفرااسٹرکچر، سیاحت، ثقافت اور خوراک سمیت مختلف شعبوں میں تعاون بڑھانے کے 12 ایم او یوز پر دستخط کیے گئے۔

ان ایم او یوز میں پاکستان ٹیلی وژن اور ترک ٹی وی ٹی آر ٹی کے درمیان تعاون، سیاحت اور ثقافت ، ترکی کی حلال ایکریڈیٹیشن ایجنسی اور پاکستان نیشنل ایکریڈیٹیشن کے درمیان حلال اشیاءکی منظوری اور اس تناظر میں باہمی تعاون بڑھانے کیلئے یادداشت پر دستخط کئے گئے۔

اس کے علاوہ ترک ایرو اسپیس انڈسٹریز اور پاکستان کی نیشنل یونیورسٹی آف سائنس اینڈ ٹیکنالوجی کے درمیان دستخط ہوئے۔اس کے علاوہ تجارت میں سہولت کاری کی مفاہمتی یادداشت اور دونوں ملکوں کے درمیان پوسٹل سروسز کے شعبہ میں تعاون کی مفاہمت کی یادداشت پر بھی دستخط کئے گئے۔

دونوں ممالک کے درمیان ریلوے اورعسکری تربیت کے شعبے میں مفاہمتی یادداشت پر بھی ایم او یو پر دستخط کئے گئے۔