.

پاکستان میں کرونا کے کیسوں کی تعداد 666، تمام بین الاقوامی پروازیں دوہفتے کے لیے معطل

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

پاکستان میں مہلک وائرس کرونا کا شکارافراد کی تعداد 666 ہوگئی ہے۔ وفاقی حکومت نے اس وبا کو پھیلنے سے روکنے کے لیے دو ہفتے تک تمام بین الاقوامی پروازیں معطل کردی ہیں۔

پاکستان کی سول ایوی ایشن اتھارٹی نے ہفتے کے روز ایک بیان میں کہا ہے کہ ’’حکومت نے تمام بین الاقوامی مسافر پروازوں کے آپریشن کو معطل کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ان میں پاکستان آنے والی چارٹرڈ اور پرائیویٹ پروازیں شامل ہیں۔فلائٹ آپریشن آج 21 مارچ (پاکستان کے معیاری وقت کے مطابق رات آٹھ بجے) سے 4 اپریل 2020 تک معطل رہیں گے۔‘‘

تاہم مال بردار طیاروں اور سفارتی پروازوں پر اس حکم کا اطلاق نہیں ہوگا۔

حکومت کی ہدایات کی روشنی میں قومی فضائی کمپنی پاکستان انٹرنیشنل ائیرلائنز (پی آئی اے) نے بھی آج رات آٹھ بجے سے 28 مارچ تک اپنی تمام بین الاقوامی پروازیں معطل کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

کرونا کے مریض

پاکستان میں کرونا وائرس سے اب تک تین اموات ہوئی ہیں اور ملک بھر میں اس مہلک وائرس سے متاثرہ افراد کی تعداد 666 ہوگئی ہے۔صوبہ سندھ نے ہفتے کے روز کرونا وائرس کے 90 نئے کیسوں کی اطلاع دی ہے۔اس صوبہ میں اب تک 357 افراد اس مہلک مرض کا شکار ہوچکے ہیں۔

صوبائی محکمہ صحت کے ترجمان کے مطابق آج جن افراد کی تشخیص ہوئی ہے، یہ تمام شیعہ زائرین ہیں اور حال ہی میں ایران سے تفتان بارڈر کے راستے پاکستان لوٹے تھے۔انھیں سکھر میں کرونا وائرس کا شکار افراد کے لیے قائم کردہ قرنطینہ مرکز میں رکھا جارہا ہے۔

صوبہ بلوچستان کے چیف سیکریٹری فضیل اصغر نے 12 نئے کیسوں کی اطلاع دی ہے۔ یہ تمام کیس صوبائی دارالحکومت کوئٹہ میں واقع قرنطینہ مرکز سے تعلق رکھتے ہیں۔ ان کی تشخیص کے بعد صوبہ میں کرونا کے مریضوں کی تعداد 104 ہوگئی ہے۔

صوبہ پنجاب کے محکمہ صحت نے کرونا وائرس کے 41 نئے کیسوں کی اطلا ع دی ہےاور صوبہ میں کرونا کے مریضوں کی تعداد بڑھ کر137 ہوگئی ہے۔ان میں 20 افراد کا تعلق لاہور سے ہے۔ڈیرہ غازی خان میں قائم کردہ قرنطینہ مرکز میں 106 افراد کو رکھا جارہا ہے۔ضلع گوجرانوالا میں چار ، راول پنڈی اور ملتان میں ایک، ایک اور جہلم میں دو افراد کرونا وائرس سے متاثر ہوئے ہیں۔

وفاقی دارالحکومت اسلام آباد میں کرونا وائرس کے 10،آزاد جموں وکشمیر اور گلگت بلتستان میں 31 اورصوبہ خیبر پختونخوا میں 27 افراد کے اس مہلک مرض میں مبتلا ہونے کی تصدیق کی گئی ہے۔