.

پاکستان میں آیندہ ہفتے سے کووِڈ-19 کی ویکسین مفت لگانے کی مہم آغاز ہوگی

آسٹرازینیکا کی ویکسین کی ایک کروڑ 70 لاکھ خوراکیں فروری سے پاکستان کو مہیا کی جائیں گی: اسدعمر

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

پاکستان میں حکومت نے آیندہ ہفتے سے کووِڈ-19 کی ویکسین مفت لگانے کے لیے مہم آغاز کرنے کا اعلان کیا ہے۔

وفاقی وزیر برائے منصوبہ بندی اور ترقی اسد عمر نے ہفتے کے روز ایک ٹویٹ میں بتایا ہے کہ عالمی ادارہ صحت (ڈبلیو ایچ او) کے کوویکس پروگرام کی جانب سے پاکستان کو ایک خط موصول ہوا ہے۔اس میں یہ بتایا گیا ہے کہ 2021ء کی پہلی ششماہی کے دوران میں برطانیہ کی دوا ساز فرم آسٹرازینیکا کی تیار کردہ کووِڈ-19 کی ویکسین کی ایک کروڑ 70 لاکھ خوراکیں پاکستان کو مہیا کی جائیں گی۔

وفاقی وزیر نے ٹویٹر پر یہ ’’خوش خبری‘‘شیئر کرتے ہوئے بتایا ہے کہ ویکسین کی قریباً 60 لاکھ خوراکیں مارچ تک وصول ہوجائیں گی اور فروری سے ان کی پاکستان میں آمد کا آغاز ہوجائے گا۔انھوں نے لکھا ہے کہ ’’ہم نے ملک میں ویکسین کی دستیابی یقینی بنانے کے لیے قریباً آٹھ ماہ قبل کوویکس کے ساتھ مفاہمت کی ایک یادداشت پر دست خط کیے تھے۔‘‘

پاکستان کو کوویکس پروگرام کے علاوہ چین کے قومی دواساز ادارے سائنو فارم کی تیارکردہ ویکسین کی پانچ لاکھ خوراکیں بھی مہیا کی جارہی ہیں۔وزیراعظم عمران خان کے معاون خصوصی برائے صحت ڈاکٹر فیصل سلطان نے بھی قوم کو ویکسین کے جلد دستیاب ہونے کی خوش خبری سنائی ہے۔

انھوں نے ایک ٹویٹ میں بتایا ہے کہ ویکسین لگانے کی مہم کا آیندہ ہفتے سے آغاز ہوگا اور سب سے پہلے کرونا وائرس کے خلاف جنگ میں محاذِ اوّل پر کردار ادا کرنے والے ہیلتھ ورکروں کو ویکسین لگائی جائے گی۔

واضح رہے کہ کوویکس کے نام سے فورم عالمی اتحاد برائے ویکسین اور امیونائزیشن (گاوی)،اتحاد برائے وبا تیاری اور عالمی ادارہ صحت نے گذشتہ سال قائم کیا تھا۔ اس اتحاد نے پاکستان سمیت مختلف ممالک کی بیس فی صد آبادی کے لیے کووِڈ-19 کی ویکسین مفت مہیا کرنے کا وعدہ کیا تھا۔

پاکستان کی ڈرگ اتھارٹی نے اب تک کووِڈ-19 کی تین ویکسینیں شہریوں کو لگانے کی منظوری دی ہے۔ان میں ایک برطانیہ کی آکسفورڈ اور آسٹرا زینیکا کی تیار کردہ ویکسین ہے،اس کے علاوہ چین کے سرکاری ملکیتی دواساز گروپ سائنو فارم اور روس کی تیار کردہ اسپوتنک پنجم ویکسین کے استعمال کی منظوری دی گئی ہے۔واضح رہے کہ آسٹرازینیکا کی ویکسین کے 65 سال سے زیادہ افراد کو لگانے کے مثبت نتائج برآمد نہیں ہوئے ہیں جس کی وجہ سے اس کے مؤثر ہونے کے بارے میں سوال اٹھائے جارہے ہیں۔

قبل ازیں پاکستان کے قومی کمان اور آپریشن مرکز (این کاک) کو روزانہ کے اجلاس میں مطلع کیا گیا تھا کہ ایک خصوصی طیارہ اتوارکو سائنو فارم کی ویکسین کی پانچ لاکھ خوراکوں کی پہلی کھیپ لانے کے لیے چین روانہ ہوگا۔ چین نے پاکستان کو دیرینہ دوست ملک ہونے کے ناتے تحفے کے طور پر پانچ لاکھ خوراکیں دینے کا وعدہ کیا تھا۔

اس اجلاس کے بعد ایک بیان میں بتایا گیا تھا کہ ویکسین کو اسلام آباد میں ذخیرہ کرنے کے لیے تمام ضروری انتظامات کر لیے گئے ہیں۔ ملک کے دوسرے علاقوں بالخصوص صوبہ سندھ اور بلوچستان میں یہیں سے بذریعہ طیارہ ویکسین کی خوراکیں روانہ کی جائیں گی۔ویکسین لگانے کی مہم کی نگرانی کے لیے این کاک میں ایک خصوصی سیل قائم کردیا گیا ہے۔ وہ صوبہ سے ضلع کی سطح تک ویکسین مہیا کرنے اور لوگوں کو لگانے کی مہم کی نگرانی کرے گا۔