.

سعودی عرب پر یمن سے حوثی ملیشیا کے بیلسٹک میزائل اور ڈرون حملوں کی شدید مذمت

الریاض حکومت سے مکمل یک جہتی، امریکا کے دباؤ اور بلیک میلنگ کو مسترد کرتے ہیں: تحریکِ دفاع الحرمین الشریفین

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

پاکستان نے سعودی عرب پر یمن سے حوثی ملیشیا کے حالیہ ڈرون اور میزائل حملوں کی شدید الفاظ میں مذمت کی ہے۔پاکستان کے دفتر خارجہ نے ایک بیان میں بالخصوص منگل کے روز حوثی ملیشیا کے سعوی عرب کے سرحدی علاقے جازان میں واقع ایک گاؤں پر میزائل حملے کی مذمت کی ہے۔اس کے نتیجے میں پانچ شہری زخمی ہوگئے ہیں۔

اس نے بیان میں کہا ہے کہ یہ حملے نہ صرف سعودی عرب کی علاقائی سالمیت اور خودمختاری کے منافی ہیں بلکہ اس سے بے گناہ شہریوں کی زندگیوں کے لیے خطرات پیدا ہوگئے ہیں۔پاکستان ان حملوں کو فوری طور پر روکنے کا مطالبہ کرتا ہے اور ان کے مقابلے میں سعودی عرب کے ساتھ مکمل یک جہتی کا اظہار کرتا ہے۔

پاکستان نے حوثی ملیشیا سے یمن کی گورنری مآرب میں بھی سرکاری سکیورٹی فورسز اور عوام کے خلاف حملے روکنے کا مطالبہ کیا ہے اور اپنے اس مؤقف کا اعادہ کیا ہے کہ یمن میں جاری تنازع کا پُرامن ذرائع سے جامع حل تلاش کیا جانا چاہیے۔

دریں اثناء تحریکِ دفاع الحرمین الشریفین کے رہ نما اور سیکرٹری جنرل مرکزی جمعیت اہل حدیث سینیٹرحافظ عبدالکریم، صدر مولانا علی محمد ابو تراب،نائب صدر مولانا شاه اویس نورانی ، سیکرٹری جنرل مولانا فضل الرحمٰن خلیل اور سیکرٹری اطلاعات پروفیسر سجاد قمر نے ایک مشترکہ بیان میں کہا ہے کہ سعودی عرب کے ساتھ ہمارا قلبی اور روحانی تعلق ہے۔پاکستان کے عوام اور علماء خادم الحرمین الشریفین شاہ سلمان بن عبدالعزیز، ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان بن عبدالعزیز اورسعودی حکومت سے مکمل یک جہتی کا اظہار کرتے ہیں اور وہ امریکا کے دباؤ اور بلیک میلنگ کو مسترد کرتے ہیں۔

انھوں نے کہا کہ سعودی عرب پوری دنیا کے مسلمانوں کا روحانی مرکزہے اور خادم الحرمین الشریفین اور سعودی حکومت کی قابل قدر خدمات اور کارنامے ہیں۔ انھوں نے کہا کہ کسی کو یہ حق حاصل نہیں کہ وہ کسی ملک کے اندرونی معاملات میں مداخلت کرے ۔امریکا نے کوئی ایسا قدم اٹھایا تو اس کے نتائج اچھے نہیں ہوں گے۔امریکا کو چاہیے کہ وہ سعودی عرب کے معاملات اس کی حکومت پر چھوڑ دے۔

ان مذہبی رہ نماؤں نے کہا کہ ’’ہم اور پوری دنیا کے مسلمان سعودی عرب کے ساتھ کھڑے ہیں۔‘‘انھوں نے حوثی باغیوں کے سعودی عرب پر حالیہ ڈرون اور میزائل حملوں کی بھی مذمت کی ہے اور کہا کہ ان کا نوٹس لینے کی ضرورت ہے۔حوثی ملیشیا کو دہشت گرد قرار دیا جائے اوراس پر پابندی لگائی جائے۔