.

حکمراں پی ٹی آئی کےعبدالقیوم نیازی آزادجموں وکشمیرکے نئے وزیراعظم منتخب

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے نامزد امیدوار عبدالقیوم نیازی آزاد ریاست جموں وکشمیر کے تیرھویں وزیراعظم منتخب ہوگئے ہیں۔

مظفرآباد میں آزادجموں وکشمیر کی نئی قانون ساز اسمبلی میں نئے وزیراعظم کے انتخاب کے لیے بدھ کو رائے شماری ہوئی ہے۔عبدالقیوم نیازی کے حق میں 33 ارکان نے ووٹ دیا ہے جبکہ مشترکہ حزب اختلاف کے امیدوار لطیف اکبر صرف 15 ووٹ حاصل کرسکے ہیں۔

عبدالقیوم نیازی نے وزیراعظم منتخب ہونے کے بعد اپنے عہدے کا حلف اٹھا لیا ہے۔صدرآزاد جموں وکشمیر سردار مسعود خان نے ان سے حلف لیا۔انھوں نے مسلم لیگ نواز راجا فاروق حیدر کی جگہ وزارت عظمیٰ کا منصب سنھالا ہے۔ان کے پیش رو وزیراعظم 30 جولائی کو اپنی آئینی مدت پوری ہونے کے بعد سبکدوش ہوگئے تھے۔

قبل ازیں وزیراطلاعات فوادحسین چودھری نے ایک ٹویٹ میں اطلاع دی تھی کہ وزیراعظم عمران خان نے طویل مشاورت کے بعد عبدالقیوم نیازی کو حکمران جماعت کا وزارت عظمیٰ کا امیدوار نامزد کیا ہے۔

وہ اے جے کے ضلع پونچھ کی تحصیل عباس پور سے گذشتہ ماہ قانون ساز اسمبلی کے حلقہ ایل اے 18 سے رکن منتخب ہوئے تھے۔وہ پی ٹی آئی کے مرکزی جائنٹ سیکریٹری بھی ہیں۔ابتدا میں ان کا نام وزارتِ عظمیٰ کے مضبوط خیال کیے جانے والے امیدواروں میں شامل نہیں تھا۔

وزیراعظم عمران خان نے گذشتہ جمعہ کو آزادکشمیر کی وزارت عظمیٰ کے عہدے کے لیے سات امیدواروں سے انٹرویو کیے تھے اور ان سے ان کی مستقبل کی حکمت عملی ،ماحول ، سیاحت اور قومی اور عالمی امور کے بارے میں سوالات پوچھے تھے۔

بعض ذرائع کے مطابق عمران خان نے اس بات پر ناپسندیدگی کا اظہار کیا تھا کہ ان پر بعض حلقوں کی جانب سے خاص امیدواروں کو منتخب کرنے کے لیے دباؤ ڈالا جارہا ہے۔

آزادکشمیر اسمبلی کے انتخابات سے قبل اور بعد میں یہ خیال کیا جارہا تھا کہ سردارتنویرالیاس یا سابق وزیراعظم بیرسٹرسلطان محمود میں سے کوئی ایک پی ٹی آئی کی جانب سے وزارتِ عظمیٰ کا امیدوار ہوسکتا ہے لیکن وزارتِ عظمیٰ کا ہُما ان دونوں میں سے کسی کے سرپر نہیں بیٹھا ہے۔

اے جے کے کے نئے وزیراعظم ایک تجربہ کار سیاست دان ہیں۔وہ بنیادی جمہوریتوں سے سفر کرتے اس عہدے تک پہنچے ہیں۔ وہ 1990ء کے عشرے میں پونچھ کی ضلع کونسل کے رکن رہے تھے۔2006ء سے 2008ء تک آزادکشمیر میں مسلم کانفرنس کی حکومت میں وہ وزیربرائے تحفظ خوراک تھے۔2010ء سے 2011ء تک سابق وزیراعظم سردارعتیق احمد خان کی دوسری کابینہ میں انھیں وزارتِ جنگلات کا قلم دان سونپا گیا تھا۔

واضح رہے کہ پاکستان کی حکمراں جماعت پی ٹی آئی نے 25 جولائی کو آزادجموں وکشمیر قانون اسمبلی کے منعقدہ انتخابات میں 26 عمومی نشستیں حاصل کی تھیں۔پاکستان پیپلزپارٹی کے امیدوار 11 نشستوں پر کامیاب ہوئے تھے،پاکستان مسلم لیگ ن نے چھے نشستیں حاصل کی تھیں جبکہ اے جے کے مسلم کانفرنس اور جموں وکشمیر پیپلزپارٹی نے ایک ایک نشست پر کامیابی حاصل کی تھی۔

گذشتہ اتوار کو اسمبلی میں خواتین کی مخصوص پانچ نشستوں پر پی ٹی آئی کی تین امیدوار کامیاب ہوگئی تھیں،پی پی پی اور پی ایم ایل۔ن کے حصے میں ایک ایک نشست آئی تھی۔سوموار کو پی ٹی آئی نے تین اور خصوصی نشستیں حاصل کرلی تھیں۔اس طرح 53 ارکان پر مشتمل اسمبلی میں اس کی نشستوں کی تعداد 32 ہوگئی تھی۔